Jump to content
  • Join Forums Pakistan .....

    Join Forums Pakistsan now, its FREE !!!

  • Member Statistics

    321
    Total Members
    234
    Most Online
    zaidazam1882
    Newest Member
    zaidazam1882
    Joined
  • Forum Statistics

    1,178
    Total Topics
    6,079
    Total Posts
  • Upcoming Events

    No upcoming events found
  • Posts

    • 50 जादुई बाग़बानी HACKS | #Gardening Tips & Hacks   
    • Amrood Tree Complete Information (best khaad for guava )  
    • Writing a college application essay is not easy, these are some useful hints and ... Sample essays are basically gives you the easiest way out and many much knowledge about how to write the essay it self. You can write a simple essay but as you see sample essay so this is something really different if you compare to normal essay it is really different. There are some useful hints for sample essays. Those hints are the main key points and it is very useful for the further essay because when you are writing college essay it is really different as you see the easiest essay that is quite different. Essays are usually you are explaining and elaborating the whole part.  There are some  types of essays Number 1: Narrative Essays, when you describe the whole story in proper details this is call narative essay it comes in this.  2 : Descriptive Essays it is like painting an image. You fulfill the whole image.  
    • This phone is good to use. It has various options and a lot of things to get the access. Main thing the screen size of this is good it is  with 6.3 inch full HD. With good ram and storage with long time battery . I have gifted this phone to my sister and she has really liked this. I asked her what is most good in this phone my sister told that this phone has nice features better than other phones. As she is crazy for selfies so best thing is this phone has the best camera result which she liked a lot . Features are also very good as you compare to other phones this is the best one to use. I guess you should buy this if you are looking for good camera and plus if you are looking for best features. Camera works really good of this . Some cameras are blur even they says it has a good result but when you talk about Samsung it is one of the best phone i have ever seen. Samsung all phones are best but this is one of the best phones. This is not an old model even just recent one. I would prefer everybody to buy this phone for a good camera and good features. 
    • Samsung Note 9 is the best phone. It has different options to go through it. Little Bit expensive but this phone is best to use.  If you are looking for something unique phone then i must suggest you to go for Samsung phone. You will get to see different options in this phone. Different kind of games options you can play in this. Camera result  is very best of this phone not just front but back camera as well.  This works very best not even hang if you download a lot of files. I would give 5 stars to this phone.  It is best version of android up till now. The new powerful phone with multiple options. Samsung is always playing best role in mobile categories.
    • Upside down tomato planter/How to grow tomato/Plastic bottles vegetable garden   Garden view point  
    • Both plays vital role but Olive Oil is for dry frizzy hair that will make it softer than how it was frizzy and dry dry. Therefore Coconut Oil is for also little bit same but Coconut Oil gives relaxment as well. It makes hair longer also if you are using the exact one means the original coconut oil not the bottle ones. They are sometimes mixed. Olive Oil is also very useful the time you will use will come to know the exact results of this. It is best for hairs. I do not think there is a huge difference between these two oils but yes Olive Oil and Coconut Oil gives different results just some percents. Otherwise both are good for hairs. 
    • Carrot is really beneficial for health. If you take daily carrot juice it is best for eye sight. Like if your eyesight is weak so i must prefer everyone to take carrot juice at least one time a day. This will improve your eyesight will make it better. You will not even have to go for eye glasses. I can assure you once you start taking this juice you will come to know it advantages. This is really good for health also. Will make you stronger and active specially. But carrot is most important and it gives good benefits for eyesight. If you eyesight is weak then this is the best juice you can take it. It will definitely work out. 
    • There are multiple styles of swimming. This is kind of excercise . I remember when i was in school time i always used to spend my June July holidays in summer camp specially for swimming classes. There was the days which were fixed for this classes. That was the most best time for me because i always used to be in for swimming. Reason is it is really good for daily basis it gives you relaxment and more makes you fit. Not bad to take out time for these classes. It will really enhance your daily life.  You will yourself remain fit and relaxed because swimming itself is so good. People swim for fun most of it as it makes you remain active a lot. So thats the reason people swim mostly for fun. Some people swim for excercise. Best one is for excercise. 
    • Coconut Oil is good for hair. If you are having a frizzy hair so  you can use this it will really make your hair smooth and soft. It gives your head relax as well. Coconut Oil is most on going product. It is best and beneficial for youngsters specially but this is not like for some of the age group. Coconut Oil is for all age group and it gives the best result like if you put this on every weekend it going to give you its result for sure. It has many benefits once you will use then only you will get to know its useful a lot.  There are many other oils as well but this is one of the best to use. 
    • Best Institute for fashion design is (Asian institute of fashion design Karachi) . This is one of the best institute so far. They give proper classes it is therefore a good scope in future. You will have a lot of learning and specially their staff ,teachers they all are really good. Give the best proper time to learn. I would suggest you to go for this institute if you have any plans for fashion designing. Plus this field has a good career in future. My sister has done it from here she is happy with he field. 
    • Cucumber is really good for skin. It makes it more brighter and give you enhance look . Specially it is good for health  also. I would suggest everyone to eat this after every meal it makes you healthier and plays a good vital role in your life. It is same like when you drink water after that  you make your health proper same way cucumber works. It makes your skin brighter and works very best . It has many benefits. 
    • Aelo Vera is really good for skin specially. And you can use it for hair also like if you want your hairs to be soft so i would recommend this to everyone to use this. It is good for hair softness better than any conditioner and all. You can get the direct gel of this or you can get a vase of aelo vera .  I have used this twice and myself have a very great experienced. You can use this in a day time. I would suggest if you are facing any kind of issue with skin as well so this is best to apply on your skin. It will give a good result. 
    • Hunza enchanted me so much that I spent several years traveling to Gilgit-Baltistan soon after I was introduced to this place.  You can live a pretty comfortable life while being in your home in a large metropolis, but as soon as you travel to the northern areas, you find that the real peace of mind lies within these beautiful mountains.  There was a time when people used to visit Hunza for rehabilitation. They still do, but now the tourism factor has increased much more than before. From winters to spring, the nature seems to be in a transition period. This place remains remarkable with every changing season. Autumn in Hunza valley. View of Rakaposhi. Whenever I am reminded of my Hunza expeditions, I have the urge to retreat to those places once again. After all, what charm is living in a society where lynching, blasts, and killing are the daily routine and the protesting voices are diminishing? How can there be peace of mind in such a place, where smiles are made-up with an intent to pull one's leg as soon as there’s a chance.  In mountains, one feels seclude; secluded from depressions, secluded from everything but the hospitable people of northern areas, the loving and caring people that they are.  Spring has just arrived. Transition period is over. Transition period, whether its of weather or of circumstances, is full of turbulence and uncertainties.  But this period is the one which nurtures and enhances the upcoming weather, time, and the circumstances. And it also nurtures one’s creativities.
    • Finding home away from home   Baltit fort. Hunza peak and Lady Finger
    • Pakistan is one of the few countries with such a dynamic landscape; rivers, deserts, lakes, waterfalls, springs, glaciers we seem to have it all in great abundance. The much renowned Hunza valley is often referred to as heaven on earth, enveloped in the grand Himalayas and the Karakoram mountain ranges, this place has been a great tourist attraction for many years. For me it all happened when I was 22 years old and left the home without telling anyone and reached Gilgit. I did not know where to go from Gilgit; stranded, I heard a bus boy calling the passengers for Hunza. I had heard of Hunza, so I hopped the bus and I could only paint pictures in my mind of what was coming next. Autumn in Hunza valley.   The view at night. Blossom in Hunza. It was April, the sun was shining and when we reached Nilt from Gilgit, I found myself surrounded by a whole new spectrum of colours; I was truly mesmerised. The meadows, plants laden with white, pink, and orange flowers could be found all over. I kept thinking to myself, why did I not land here earlier? There were so many flowers alongside the road from Hussainabad to Aliabad, it seemed to be the literal meaning of primrose path. Spring was my first love, and you can forget everything but not your first love.    Looking back Ganish village in Hunza. Sunset in Golden Peak , Gilgindar and Chotokan Peak. Cherry blossom in garden. Hunza is located at a distance of 100 kilometers from Gilgit. In early 1890s, the British embarked upon a mission to annex Hunza and Nagar, which is also known as the Hunza-Nagar Campaign.  British soldiers led by Colonel Durand occupied Nilt Fort in 1890. After that, they proceeded to the Baltit Fort, but faced heavy resistance.  The British gained complete control of Hunza and Nagar with little effort. Thereafter, the Mir of Hunza, Safdar Ali Khan along with his family, fled to Kashgar in China, and his brother Mir Muhammad Nazim Khan was made the new ruler of Hunza by the British.  
    • سوئز بینک میں کھاتہ ہمارا مجتبی حسین   حضرات!میں کسی مجبوری اور دباؤ کے بغیر اور پورے ہوش و حواس کے ساتھ یہ اعلان کرنا چاہتا ہوں کہ سوئٹزرلینڈ کے ایک بینک میں میرا اکاؤنٹ موجود ہے۔آپ اس بات کو نہیں مانتے تو نہ مانئے۔ میری بیوی بھی پہلے اس بات کو نہیں مانتی تھی۔اب نہ صرف اس بات کو مان رہی ہے بلکہ مجھے بھی ماننے لگی ہے۔ آپ یقیناً یہ سوچ رہے ہوں گے کہ جب سارے لوگ اپنے کھاتوں کو پوشیدہ رکھنے کے سو سو جتن کررہے ہیں تو ایسے میں مجھے اپنے آپ ہی اپنے کھاتے کی موجودگی کا اعلان کرنے کی ضرورت کیوں پیش آرہی ہے۔ ایک دن میں دفتر سے بے حد تھکا ماندہ گھر پہنچا تو بیوی نے کہا’’آپ جو اتنا تھک جاتے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہے کہ آپ دفتر میں کام بھی کرتے ہیں۔’’ میں نے کہا‘‘بھلا یہ بھی کوئی پوچھنے کی بات ہے۔ آدمی کام کرنے سے ہی تو تھکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج تک میں نے کسی سیاستدان اور مولوی کو تھکا ماندہ نہیں پایا۔’’ بولی‘‘آدمی محنت کرتا ہے تو پھر اسے اس کا صلہ بھی ملتا ہے۔ تم جو اتنی محنت کرتے ہو تو تمہیں کیا مل رہا ہے؟’’ ظاہر ہے کہ اس مشکل سوال کا آسان جواب جب ملک کے ماہرین معاشیات کے پاس بھی نہیں ہے تو میں کیا خاک جواب دیتا۔سو میں خاموش ہوگیا۔ میں نے سوچا کہ تیس برس کی رفاقت میں، میں نے اپنی بیوی کو روز کی خوشیاں اسی روز دینے کے سوائے اور کیا کیا ہے۔ اس کی جھولی میں ایک ایک دن اور ایک ایک پل کو جوڑ کر جمع کیا ہوا تیس برسوں کے عرصہ پر پھیلا ہوا ماضی تو ہے لیکن آنے والے کل کا کوئی ایسا لمحہ نہیں ہے جسے عام زبان میں خوش آئند مستقبل کہتے ہیں۔ میں نے سوچا آج اسے تھوڑا سا مستقبل بھی دے دیتے ہیں۔ لہٰذا میں نے کہا‘‘یہ تم کیا محنت اور صلہ کے پیچھے حیران ہو رہی ہو۔ آج میں تمہیں ایک خوش خبری سنانا چاہتا ہوں کہ سوئٹزرلینڈ کے ایک بینک میں میرا اکاؤنٹ موجود ہے۔’’یہ سنتے ہی میری بیوی کا منہ حیرت سے کھلا کا کھلا رہ گیا۔ بڑی دیر بعد جب وہ بند ہوا تو اس نے اچانک گھر کے دروازے اور کھڑکیاں بند کرنی شروع کردیں۔ میں نے کہا‘‘یہ کیا کر رہی ہو؟’’ بولی‘‘سوئٹزرلینڈ کے بینک کے کھاتے کی بات کوئی یوں کھلم کھلا کرتا ہے۔ اگر بفرض محال سوئٹزرلینڈکے کسی بینک میں تمہارا کھاتہ ہے بھی تو تمہیں اس کا اعلان کرنے کی کیا ضرورت ہے۔ اگر مجھے اس کھاتے کا سراغ لگانا ہو تو میں کسی خفیہ ایجنسی کے ذریعے اس کا پتہ لگا سکتی ہوں یا پھر ایک دن ملک کے کسی اخبار میں خود بخود اس کی خبر چھپ جائے گی۔مگر پہلے یہ بتاؤ کیا سچ مچ سوئٹزرلینڈکے بینک میں تمہارا کھاتہ موجود ہے؟’’ میں نے کہا‘‘سچ بتاؤ! آج تک میں نے تم سے کبھی جھوٹ کہا ہے؟’’ بولی‘‘سوتو ہے مگر یہ کھاتہ تم نے کھولا کب؟’’ میں نے کہا‘‘چار سال پہلے جب میں یوروپ گیا تھا؟’’ میرے اس جواب نے میری بیوی کو اور بھی حیرت میں ڈال دیا کیونکہ اسے پتہ تھا کہ جب میں یورپ کے لئے روانہ ہوا تھا تو میری جیب میں صرف بیس ڈالر تھے۔اگرچہ حکومت نے مجھے اجازت دی تھی کہ اگر میں بیرونی زرمبادلہ حاصل کرنا چاہوں تو پانچ سو ڈالر تک خرید سکتا ہوں۔ لیکن بیرونی کرنسی خریدنے کے لئے پہلے مجھے ہندوستانی کرنسی کی ضرورت تھی۔ بیرونی کرنسی تو مجھے مل رہی تھی لیکن اصل سوال ہندوستانی کرنسی کا تھا۔ یہ تو آپ جانتے ہیں کہ ہندوستان میں رہ کر ہندوستانی کرنسی کو حاصل کرنا کتنا مشکل کام ہے۔ اتنے میں میری بیوی دنیا کا نقشہ اٹھا کر لے آئی اور بولی‘‘ذرا دکھاؤ تو سہی۔ یہ موا سوئٹزرلینڈ ہے کہاں؟ اور اس میں ہمارا اکاؤنٹ کہاں رکھا ہوا ہے؟’’ میں نے دنیا کے نقشہ میں اسے سوئٹزرلینڈکو دکھانے کی کوشش شروع کردی۔لیکن کمبخت سوئٹزرلینڈاتنا چھوٹا نکلا کہ اس پر جب جب انگلی رکھتا تو پورے کا پورا سوئٹزرلینڈغائب ہوجاتاتھا۔ بالآخر قلم کی نوک سےسوئٹزرلینڈکے حدوداربعہ اس پر واضح کئے تو بولی‘‘یہ تو اتنا چھوٹا ہے کہ اس میں کسی بینک کی عمارت شاید ہی سما سکے۔ ہمارے بینک اکاؤنٹ کے سمانے کا نمبر تو بعد میں آئے گا۔’’ میں نے کہا‘‘تم ٹھیک کہتی ہو۔ مجھے یاد ہے کہ میں اپنے دوست کے ساتھ جنوبی فرانس کے راستہ سے بذریعہ موٹر سوئٹزرلینڈمیں داخل ہوا تھا۔ اس ملک کا اتنا ذکر سنا تھا سوچا کہ ذرا اس ملک کے اندر پہنچ کر اس کا دیدار کر لیتے ہیں۔ میرا دوست موٹر تیز چلاتا ہے۔ تھوڑی دیر بعد سڑک پر کچھ سپاہیوں نے ہمیں روک لیا اور پوچھا ‘‘کہاں کا ارادہ ہے؟’’ عرض کیا‘‘اک ذرا سوئٹزرلینڈتک جانے کا ارادہ ہے۔’’ سپاہیوں نے کہا‘‘قبلہ! آپ جہاں جانا چاہتے ہیں وہاں سے واپس جارہے ہیں۔’’ چاروناچار ہمیں پھر سوئٹزرلینڈمیں واپس ہونا پڑا اور موٹر کی رفتار دھیمی کرنی پڑی کہ کہیں ہم تیز رفتاری میں کسی اور ملک میں نہ نکل جائیں۔ بیوی نے کہا‘‘مگر تم تو سوئٹزرلینڈسیر سپاٹے کے لئے گئے تھے۔ وہاں کے قدرتی مناظر کو دیکھنے گئے تھے۔ یہ انکاؤنٹ کھولنے والا معاملہ کب ظہور میں آیا؟’’ میں نے کہا‘‘بیگم! کان کھول کر سن لو۔ یہ پہاڑ اورقدرتی مناظر سب بہانے بنانے کی باتیں ہیں۔ آج تک کوئی سوئٹزرلینڈمیں صرف پہاڑ دیکھنے کے لئے نہیں گیا۔پہاڑ کی آڑ میں وہ کچھ اور کرنے جاتا ہے۔ سوئٹزرلینڈکے پہاڑ اس لئے اچھے لگتے ہیں کہ ان کے دامن میں سوئٹزرلینڈکے وہ مشہور و معروف بینک ہیں جن میں اپنا پیشہ جمع کراؤ تو پیسہ جمع کرنے والے کی بیوی تک کو معلوم نہیں ہوتا کہ اس میں اس کے شوہر کا پیسہ جمع ہے۔ ایک صاحب کہہ رہے تھے کہ بعض صورتوں میں تو خود بینک کے انتظامیہ کو بھی پتہ نہیں ہوتا کہ اس کے بینک میں کس کا کتنا پیسہ جمع ہے۔ ان بینکوں کو وہاں سے ہٹا لو تو سوئٹزرلینڈکے قدرتی مناظراوران پہاڑوں کی ساری خوبصورتی دھری کی دھری رہ جائے۔ سچ تو یہ ہے کہ جس نے پہلگام اور گلمرگ اور پیر پنجال میں ہمالیہ کے پہاڑ دیکھے ہیں اسے سوئٹزرلینڈکے پہاڑ کیا پسند آئیں گے۔رہی برف کی بات تو اسے تو ہم ہر روز ریفریجریٹر میں دیکھتے ہیں۔ اب بتاؤ سوئٹزرلینڈ میں کیا رہ جاتا ہے۔ ہاں کسی زمانے میں یہاں کی گھڑیاں بہت مشہور تھیں۔ اب جاپان نے ان کی ایسی تیسی کردی ہے۔ کسی نے سچ کہا ہے کہ گھڑی سازی کے معاملہ میں ہرملک کا ایک وقت ہوتا ہے۔سوئٹزرلینڈکی گھڑی اب ٹل چکی ہے۔ اب اس کے بینکوں میں پیسہ جمع کرنے والوں پرگھڑی آئی ہے۔ اس لئے یاد رکھو کہ جو کوئی سوئٹزرلینڈجائے گا وہاں اپنا پیسہ جمع کرا کے آئےگا۔’’ بیوی نے کہا ‘‘تو اس کا مطلب یہ ہواکہ تم سوئٹزرلینڈصرف اپنا کھاتہ کھلوانے گئے تھے؟’’ میں نے کہا ‘‘اور کیا پہاڑ دیکھنے تھوڑی گیاتھا۔’’ بولی‘‘جب کھاتہ کھلواناہی تھا تو ہندوستان کے کسی بینک میں رقم جمع کراتے۔’’ میں نے کہا‘‘کیا تم نہیں جانتیں کہ ہمارے بینکوں کی کیا حالت ہے۔ آئے دن تو ڈاکے پڑتے رہتے ہیں۔ لوگ بینکوں کے کھلنے کا اتنا انتظار نہیں کرتے جتنا کہ ڈاکوان بینکوں کے بند ہونے کا انتظارکرتے ہیں۔ پھرسوئٹزرلینڈمیں بینک کا کھاتہ کھولنے کا لطف ہی کچھ اور ہے۔’’ اور یوں میں نے ایک خوش آئند مستقبل کے کچھ لمحے اپنی بیوی کو سونپ دیئے۔ اس بات کو ہوتے تین مہینے بیت گئے۔نہ تو اس نے مجھ سے اکاؤنٹ نمبر پوچھا، نہ اکاؤنٹ کا خفیہ نام اور نہ ہی یہ پوچھا کہ اس اکاؤنٹ میں کتنی رقم جمع ہے۔ یہ ضرور ہے کہ پچھلے تین مہینوں سے وہ بہت خوش ہے۔ اس کی زندگی میں ایک ایسا خوشگوار اعتماد پیدا ہو چکا ہے جس کی نظیر پچھلے تیس برسوں میں مجھے کبھی نظر نہ آئی۔ البتہ یہ ضرور ہے کہ اس اعتراف کے بعد میں اپنے آپ میں اعتماد کی کمی محسوس کررہا ہوں۔ حضرات! یہ توآپ بخوبی جانتے ہیں کہ بینکوں سے میرا کتنا تعلق ہوسکتا ہے۔ایک محفل میں ایک مشہور و معروف ادیب سے ایک مشہور و معروف بینکر کا تعارف کرایا گیا تو بینکر نے ادیب سے کہا‘‘آپ سے مل کربڑی خوشی ہوئی لیکن میری بدقسمتی یہ ہے کہ میں نے آج تک آپ کی کوئی کتاب نہیں پڑھی۔’’ اس پر ادیب نے کہا ‘‘مجھے بھی آپ سے مل کر بڑی خوشی ہوئی لیکن میری بدقسمتی یہ ہے کہ آج تک میں کسی بینک میں داخل نہیں ہوا۔’’ میں اتنا بڑا ادیب تو خیر نہیں ہوں کہ کبھی کسی بینک میں قدم ہی نہ رکھ پاؤں۔میں بینک ضرور جاتا ہوں۔ بینک میں میرا کھاتہ بھی موجود ہے۔ میری تنخواہ چونکہ چیک سے ملتی ہے۔اسی لئے بینک میں کھاتہ کھولنا ضروری تھا۔ یہ اور بات ہے کہ میرا کھاتہ، میرا اور میری بیوی کا،‘‘جوائنٹ اکاؤنٹ’’ ہے۔ اس جوائنٹ اکاؤنٹ کی خصوصیت یہ ہے کہ اس میں رقم جمع کرنے کی ذمہ داری تو میری ہوتی ہے مگر اس میں سے رقم نکالنے کا خوشگوار فریضہ میری بیوی کو انجام دینا پڑتا ہے۔ اندرون ملک اپنی تو یہ مالی حالت ہے کہ کوئی آفت کا مارا مجھ سے بیس پچیس روپئے بھی ادھار مانگتا ہے تو میں اس کا بے حد شکریہ ادا کرتا ہوں۔ اسے رقم تو نہیں دیتا البتہ شکریہ اس بات کا ادا کرتا ہوں کہ وہ مجھے اس قابل تو سمجھتا ہے کہ مجھ سے بیس پچیس روپئے ادھار مانگے جاسکیں۔ اس صورتحال کے باوجود سوئٹزرلینڈکے بینک میں میرا کھاتہ موجود ہے اور اس معاملہ کوآپ کے سامنے رکھنے کی وجہ صرف اتنی ہے کہ پچھلے تین مہینوں سے میں عجیب و غریب کیفیت سے گزر رہا ہوں۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ میں نے پوری رازداری اورایمانداری کے ساتھ اپنے کھاتہ کی اطلاع اپنی بیوی کو دی تھی۔مجھے یقین تھا کہ وہ خاندان کے اس راز کو اپنے سینے میں چھپائے رکھے گی۔مگر رفتہ رفتہ مجھے احساس ہونے لگا کہ اس راز کی روشنی میرے گھر کے اطراف دھیرے دھیرے پھیلنے لگی ہے۔ ایک مہینے پہلے کی بات ہے۔ میں محلہ کی ایک دکان سے موزے خریدنے گیا تھا۔ مجھے موزوں کی ایک جوڑی پسند آئی لیکن دکاندار نے قیمت جو بتائی وہ ہندوستان میں میرے موجودہ بینک بیلنس کی بساط سے باہر تھی۔ دکاندارنے مجھے آنکھ مارکر کہا‘‘صاحب! آپ یہ موزے لیجئے۔بیس پچیس روپئے کے فرق پر نہ جائیے۔ باقی پیسے بعد میں دیجئے جب سوئٹزرلینڈسے آپ کا پیسہ آجائے گا۔’’ تھوڑی دیر کے لئے میں چونک سا گیا لیکن سوچا کہ ان دنوں چونکہ سوئٹزرلینڈکے بینکوں کا بہت چرچا ہے اس لئے دکاندار نےمذاق میں یہ بات کہی ہوگی۔پھر میں نے محسوس کیا کہ محلہ کے وہ لوگ جو مجھ سے منہ چھپاتے تھے یا مجھ سے کتراتے تھے نہ صرف اپنا منہ دکھانے لگے ہیں۔ بلکہ ضرورت سے زیادہ سلام بھی کرنے لگے ہیں۔ پڑوسیوں کے بارے میں آپ جانتے ہیں کہ یہ صرف آپ کی خوشیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہیں۔اور اگر آپ کی زندگی میں دکھ نہ ہوں تو انہیں پیدا کرنے کی کوشش بھی کرتے ہیں۔ یہ پڑوسی اب مجھےعجیب وغریب نظروں سے دیکھتے ہیں۔میرے ایک پڑوسی کپڑے کا کاروبار کرتے ہیں لیکن کاروبار کرنے کا ڈھنگ کچھ ایسا ہے جیسے سارے ملک کو ننگا کر کے چھوڑیں گے۔ پیسے کی وہ ریل پیل ہے کہ نہ جانے اتنا پیسہ کہاں رکھتے ہیں۔ بیس برسوں کے پڑوسی ہیں لیکن ان سے تعلقات پچھلے دو مہینوں میں ہی قائم ہوئے۔ ان کی بیوی ان دنوں میری بیوی کی سب سےاچھی اور چہیتی سہیلی بنی ہوئی ہے۔ دو تین مرتبہ مجھے بھی اپنے گھر بلا چکے ہیں۔ جب بھی بلاتے ہیں میرےساتھ وہ سلوک کرتے ہیں جو اہل غرض بے ایمان وزیروں کے ساتھ روا رکھتے ہیں۔ پچھلے ہفتہ میری بیوی نے بتایا کہ میری پڑوسی کی بیوی اس سے یہ جاننا چاہتی ہے کہ سوئٹزرلینڈکے بینک میں کھاتہ کھولنے کا کیا طریقہ ہے؟ میں نےکہا‘‘انہیں کیسےمعلوم ہوا کہ میرا کھاتہ سوئٹزرلینڈکے بینک میں موجود ہے؟’’ بیوی نے کہا‘‘تم بھی کیسی باتیں کرتے ہو۔انہیں کیسے پتہ چل سکتا ہےکہ سوئٹزرلینڈکے بینک میں تمہارا کھاتہ ہے۔ تم چونکہ پڑھے لکھے آدمی ہو اسی لئے تم سےکھاتہ کھولنے کا طریقہ جاننا چاہتے ہوں گے۔ بتانے میں کیا حرج ہے، آخرکو پڑوسی ہیں۔’’ میں نے کہا‘‘پڑوسی تو بیس برس سے ہیں۔لیکن پڑوسیوں کا سا سلوک صرف پچھلے دو مہینوں سے کیوں کر رہے ہیں؟’’پھر بھی میں نے کھاتہ کھولنے کا طریقہ انہیں بتا دیا۔ یہاں تک تو خیر ٹھیک تھا۔ پرسوں ایک عجیب و غریب واقعہ پیش آیا۔ میں صبح ڈرائنگ روم میں بیٹھا داڑھی بنا رہا تھا کہ ایک بھکاری حسب معمول میرے گھر پر آواز لگانے لگا۔ دوسرے بھکاری نے،جو میرے پڑوسی کے گھر پر کھڑا تھا، میرے گھر کے سامنے کھڑے ہوئے بھکاری سے کہا‘‘میاں! اس گھر پر آواز لگا کر کیوں اپنا وقت ضائع کرتے ہو۔ اس کا تو سارا پیسہ سوئٹزر لینڈ میں ہے۔ناحق کیوں انہیں تنگ کرتے ہو۔’’ پانی اب میرے سر سے اونچا ہو چکا تھا۔ میں نے فوراً اپنی بیوی کو طلب کیا اور کہا‘‘تمہیں یاد ہوگا کہ تین مہینے پہلے میں نے تمہیں اس راز سے واقف کرایا تھا کہ سوئٹزرلینڈ کے ایک بینک میں میرا اکاؤٹ موجود ہے۔’’ بیوی نے کہا‘‘یاد رکھنے کی بات کرتے ہو۔ میں تو دن کے چوبیسوں گھنٹے اس بات کو یاد رکھتی ہوں۔ تمہیں اب اچانک اس اکاؤنٹ کی کیوں یاد آگئی۔ تم نے پہلی بار اپنے اکاؤنٹ کا جو اعتراف کیا تھا کیا وہ غلط تھا؟’’ میں نے کہا‘‘غلط نہیں تھا مگر میرا اعتراف ادھورا تھا۔ میں نے تمہیں اپنے کھاتے کانمبر، کھاتے کا خفیہ نام اور کھاتے میں جمع رقم کے بارے میں کچھ بھی نہیں بتایا تھا۔’’ بیوی نے کہا‘‘میں اچھی طرح جانتی ہوں کہ تمہارے کھاتے کا نمبر‘چار سو بیس’ ہے، کھاتہ کا خفیہ نام‘گوبھی کا پھول’ ہے اور اس کھاتے میں سوئٹزرلینڈ کے صرف دس مارک جمع ہیں۔’’ میں نے حیرت سے پوچھا!‘‘تمہیں کس نے بتایا؟’’ بولی‘‘میں نے اس سلسلہ میں ایک خفیہ ایجنسی کی خدمات حاصل کی تھیں۔‘‘فیرسیکس’’نام ہے اس کا۔سوئٹزرلینڈ کے کھاتوں کا سراغ اسی طرح لگایا جاتا ہے۔’’میں نے کہا‘‘بات دراصل یہ تھی کہ سوئٹزرلینڈ میں جب دیکھنے کو کچھ بھی نہیں ملا اور وہاں سے واپس چلتے وقت میری جیب میں دس سوئس مارک بچ رہے تو میں نے سوچا کیوں نہ اس رقم کو سوئٹزرلینڈ کے کسی بینک میں جمع کرادوں۔ ہندوستان میں یہ سہولت ہے کہ کسی تاریخی مقام کو دیکھنے جاتے ہیں تو اس مقام پراپنا نام بھی لکھ کرآسکتے ہیں تاکہ نہ صرف سند رہے بلکہ اپنی نشانی بھی موجود رہے۔ سوئٹزر لینڈ میں مجھے یہ سہولت بھی میسرنہیں تھی۔ لہٰذا میں نے یادگار کے طور پراپنا اکاؤنٹ کھول دیا۔ یہ کوئی اہمیت کی بات نہیں ہے اور تمہیں بھی اسے اہمیت نہیں دینا چاہئے۔ اب تو میں اس اکاؤنٹ کو بند کرانے کی سوچ رہا ہوں۔’’ بیوی نے کہا‘‘خبردار! جو اس اکاؤنٹ کو بند کیا تو۔ آج سے اسے بھی جوائنٹ اکاؤنٹ ہی سمجھو۔ ان دنوں سماج میں عزت اسی کی ہے جس کا سوئٹزرلینڈ کے بینکوں میں اکاؤنٹ ہو۔ چار برس پہلے جب تم سوئٹزرلینڈ گئے تھے تو ہندوستان میں سوئٹزر لینڈ کا اتنا کریز نہیں تھا۔ تم نے تو جذباتی ہو کر غفلت میں اس اکاؤنٹ کو کھولا تھا۔ مجھے کیا پتہ تھا کہ کبھی تمہاری غفلت سے فائدہ بھی پہنچ سکتا ہے۔ تم یقین کرو سوئٹزرلینڈ کے بینک میں جمع کئے ہوئے تمہارے دس مارک ہندوستان میں دس کروڑ کے برابر ہیں۔ دیکھتے نہیں سماج میں تمہاری کتنی عزت ہو رہی ہے۔کتنی دعوتیں کھا چکے ہو۔دکاندار ادھار تک دینے لگے ہیں۔جو لوگ برابری کے ساتھ ملتے تھے وہ اب جھک جھک کر ملنے لگے ہیں۔ اور تو اور محلہ کے لیڈیز کلب کی چیئرپرسن کے طور پرآج میرا بلامقابلہ انتخاب ہونے والا ہے۔ یہ سب کس کی بدولت ہے۔ ذراسوچوتو۔ملک کے سارے شرفا اب اپنے اکاؤنٹ سوئٹزرلینڈ کے بینکوں میں کھولنے لگے ہیں اورتم اپنا کھاتہ بند کرنے چلے ہو۔ خدا کا شکرادا کرو کہ ایک اتفاقی غلطی سے تمہارا شمار بھی شرفا میں ہونے لگا ہے ورنہ زندگی بھر یونہی جوتیاں چٹخاتے پھرتے۔ یہ میری گزارش نہیں حکم ہے کہ یہ اکاؤنٹ اب بند نہیں ہوگا۔’’ یہ کہہ کر میری بیوی لیڈیز کلب کی چیئرپرسن کے انتخاب میں حصہ لینے کے لئے چلی گئی اور میں دنیا کے نقشہ میں پھر سے سوئٹزرلینڈ کو تلاش کرنے لگا۔
    • دھوبی رشید احمد صدیقی   علی گڑھ میں نوکرکوآقا ہی نہیں‘‘آقائے نامدار’’بھی کہتے ہیں اور وہ لوگ کہتے ہیں جوآج کل خودآقا کہلاتے ہیں بمعنی طلبہ!اس سے آپ اندازہ کرسکتے ہیں کہ نوکرکا کیا درجہ ہے۔ پھرایسے آقا کا کیا کہنا ‘‘جو سپید پوش’’واقع ہو۔سپید پوش کا ایک لطیفہ بھی سن لیجئے۔آپ سے دور اور میری آپ کی جان سے بھی دورایک زمانے میں پولیس کا بڑا دور دورہ تھا اسی زمانہ میں پولیس نے ایک شخص کا بدمعاشی میں چالان کردیا کلکٹر صاحب کے یہاں مقدمہ پیش ہوا۔ ملزم حاضرہواتو کلکٹرصاحب دنگ رہ گئے۔نہایت صاف ستھرے کپڑے پہنے ہوئے صورت شکل سے مرد معقول بات چیت نہایت نستعلیق کلکٹر صاحب نے تعجب سے پیشکار سے دریافت کیا کہ اس شخص کا بدمعاشی میں کیسے چالان کیا گیا دیکھنے مںد تویہ بالکل بدمعاش نہیں معلوم ہوتا! پیشکار نے جواب دیا حضور! تامل نہ فرمائیں یہ سفید پوش بدمعاش ہے!’’ لیکن میں نے یہاں سفید پوش کا لفظ اس لیے استعمال کیا ہے کہ میں نے آج تک کسی دھوبی کو میلے کپڑے پہنے نہیں دیکھا۔ اور نہ اس کو خود اپنے کپڑے پہنے دیکھا۔ البتہ اپنا کپڑا پہنے ہوئے اکثر دیکھا ہے بعضوں کو اس پر غصہ آیا ہوگا کہ ان کا کپڑا دھوبی پہنےہو۔کچھ اس پر بھی جز بز ہوئے ہوں گے کہ خود ان کو دھوبی کے کپڑے پہننے کا موقع نہ ملا۔ میں اپنے کپڑے دھوبی کو پہنے دیکھ کر بہت متاثر ہوا ہوں۔ کہ دیکھئے زمانہ ایسا آگیا کہ یہ غریب میرے کپڑے پہننے پر اتر آیا گو اس کے ساتھ یہ بھی ہے کہ اپنی قمیص دھوبی کو پہنے دیکھ کر میں نے دل ہی دل میں افتخار بھی محسوس کیا ہے۔ اپنی طرف سے نہیں تو قمیص کی طرف سے۔ اس لیے کہ میرے دل میں یہ وسوسہ ہے کہ اس قمیص کو پہنے دیکھ کر مجھے در پردہ کسی نے اچھی نظر سے نہ دیکھا ہوگا۔ ممکن ہے خود قمیص نے بھی اچھی نظر سے نہ دیکھا ہو۔ دھوبیوں سے حافظؔ اوراقبالؔ بھی کچھ بہت زیادہ مطمئن نہ تھے۔ مجھے اشعاریاد نہیں رہتےاورجویادآتے ہیں وہ شعرنہیں رہ جاتے سہل ممتنع بن جاتے ہیں۔ کبھی سہل زیادہ اورممتنع کم اوراکثرممتنع زیادہ اور سہل بالکل نہیں۔ اقبال نے میرے خیال میں (جس میں اس وقت دھوبی بسا ہوا ہے) شاید کبھی کہا تھا۔ آہ بیچاروں کےاعصاب پہ دھوبی ہے سوار! یا حافظ نے کہا ہو فغان کین گا ذران شوخ و قابل داروشہرآشوب ان دونوں کا سابقہ دھوبیوں سے یقیناً رہا تھا۔ لیکن میں دھوبیوں کے ساتھ نا انصافی نہ کروں گا۔ حافظؔ اور اقبال کو تو میں نے تصوف اور قومیات کی وجہ سے کچھ نہیں کہا۔ لیکن میں نے بہت سے ایسے شعراءدیکھے ہیں جن کے کپڑے کبھی اس قابل نہیں ہوتے کہ دنیا کا کوئی دھوبی سوا ہندوستان کے دھوبی کے دھونے کے لیےقبول کرلے۔ اگر ان کپڑوں کو کوئی جگہ مل سکتی ہے تو صرف ان شعراء کے جسم پر۔میں سمجھتا ہوں کہ لڑائی کے بعد جب ہر چیز کی دروبست نئے سرے کی جائے گی اس وقت عام لوگوں کا یہ حق بین الاقوامی پولیس مانے اور منوائے گی کہ جس شاعر کے کپڑے کوئی دھوبی دھوتا ہو بشرطیکہ دھوبی خود شاعر نہ ہو اس سے کپڑے دھلانے والوں کو یہ حق پہنچتا ہے کہ دھلائی کا نرخ کم کرالیں۔ یہ شعراء اور ان کے بعض قدردان بھی دھوبی کے سپرد اپنے کپڑے اس وقت کرتے ہیں جب ان میں اور کپڑے میں کوڑا اور کوڑا گاڑی کا رشتہ پیدا ہوجاتا ہے۔ دھوبی کپڑے چراتے ہیں بیچتے ہیں کرایے پر چلاتے ہیں، گم کرتے ہیں، کپڑے کی شکل مسخ کردیتے ہیں، پھاڑ ڈالتے ہیں یہ سب میں مانتا ہوں اور آپ بھی مانتے ہوں گے لیکن اس میں بھی شک نہیں کہ ہمارے آپ کے کپڑے اکثر ایسی حالت میں اترتے ہیں کہ دھوبی کیا کوئی دیوتا بھی دھوئے تو ان کو کپڑے کی ہیئت و حیثیت میں واپس نہیں کرسکتا۔مثلاً غریب دھوبی نے ہمارے آپ کے ان کپڑوں کو پانی میں ڈالا ہو میل پانی میں مل گیا اللہ اللہ خیر سلا جیسے خاک کا پتلا خاک میں مل جاتا ہے خاک خاک میں آگ آگ میں پانی پانی میں اور ہوا ہوا میں۔ البتہ ان کپڑے پہننے والوں کا یہ کمال ہے کہ انہوں نے کپڑے کو تو اپنی شخصیت میں جذب کر لیا اور شخصیت کو کثافت میں منتقل کردیا۔ مثلاً لطافت بے کثافت جلوہ پیدا کر نہیں سکتی! اور یہی کثافت ہم دنیا داروں کو قمیص پگڑی اور شلوار میں نظر آتی ہو۔ یہ بات میں نے کچھ یوں ہی نہیں کہہ دی ہے۔ اونچے قسم کے فلسفے میں آیا ہے کہ عرض بغیر جوہر کے قائم رہ سکتا ہے اور نہ بھی آیا ہو تو فلسفیوں کو دیکھتے یہ بات کبھی نہ کبھی ماننی پڑے گی۔ دھوبی کے ساتھ ذہن میں اوربہت سی باتیں آتی ہیں مثلاً گدھا، رسی، ڈنڈا، دھوبی کا کتا،دھوبن( میری مراد پرند سے ہے) استری (اس سے بھی میری مراد وہ نہیں ہے جو آپ سمجھتے ہیں) میلے ثابت پھٹے پرانے کپڑے وغیرہ۔ ممکن ہے آپ کی جیب میں بھولے سے کوئی ایسا خط رہ گیا ہو جس کو آپ سینے سے لگا رکھتے ہوں لیکن کسی شریف آدمی کو نہ دکھا سکتے ہوں اور دھوبی نے اسے دھو پچھاڑ کر آپ کا آنسو خشک کرنے کے لئے بلاٹنگ پیپر بنا دیا ہو یا کوئی یونانی نسخہ آپ جیب میں رکھ کر بھول گئے ہوں اوردھوبی اسے بالکل ‘‘صاف نمودہ’’ کر کے لایا ہو۔ لڑائی کے زمانے میں جہاں اور بہت سی دشواریاں ہیں۔ وہاں یہ آفت بھی کم نہیں کہ بچے کپڑے پھاڑتے ہیں عورتیں کپڑے سمیٹتی ہیں۔ دھوبی کپڑے چراتے ہیں دوکاندار قیمتیں بڑھاتے ہیں اور ہم سب کے دام بھگتے ہیں۔ لڑائی کے بعد زندگی کی ازسر نو تنظیم ہو یا نہ ہو کوئی تدبیرایسی نکالنی پڑے گی کہ کپڑے اوردھوبی کی مصیبتوں سے نوع انسانی کو کلیتہً نجات نہ بھی ملے تو بہت کچھ سہولت میسرآجائے۔ کپڑے کا مصرف پھاڑنے کےعلاوہ حفاظت، نمائش اورسترپوشی ہے میراخیال ہے کہ یہ باتیں اتنی حقیقی نہیں ہیں جتنی ذہنی یارسمی۔ سردی سے بچنے کی ترکیب تویونانی اطبا اور ہندوستانی سادھو جانتے ہیں ایک کشتہ کھاتا ہےدوسرا جسم پرمل لیتا ہے۔ نمائش میں ستر پوشی اور ستر نمائی دونوں شامل ہیں۔ میرا خیال ہے کہ اگر ستر کے رقبہ پر کنٹرول عائد کردیا جائے تو کپڑا یقیناً کم خرچ ہوگا اور دیکھ بھال میں بھی سہولت ہوگی۔ جنگ کے دوران میں یہ مراحل طے ہوجاتے تو صلح کا زمانہ عافیت سے گزرتا۔ لیکن اگرایسا نہ ہو سکے تو پھردنیا کی حکومتوں کو چاہیے کہ وہ تمام سائنس دانوں اور کاریگروں کو جمع کر کے قوم کی اس مصیبت کو ان کے سامنے پیش کریں کہ آئندہ سے لباس کے بجائے ‘‘انٹی دھوبی ٹینک’’کیوں کر بنائے اوراوڑھے پہنے جاسکتے ہیں۔ اگریہ ناممکن ہے اوردھوبیوں کے پھاڑنے پچھاڑنے اورچُرانے کے پیدائشی حقوق مجروح ہونے کا اندیشہ ہو جس کو دنیا کی خدا ترس حکومتیں گوارا نہیں کر سکتیں یا بعض بین الاقوامی پیچیدگیوں کے پیش آنے کا اندیشہ ہے تو پھر رائے عامہ کو ایسی تربیت دی جائے کہ لباس پہننا ہی یک قلم موقوف کردیا جائے۔ اورتمام دھوبیوں کو کپڑا دھونے کے بجائے بین الاقوامی معاہدوں اورہندوستان کی تاریخوں کودھونے پچھاڑنےاور پھاڑنے پرمامورکردیا جائے۔ بفرضِ محال سترپوشی پرکنٹرول ناممکن ہویا ترک لباس کی اسکیم پربزرگان قوم جامے سے باہر ہوجائیں اور دھوبی ایجی ٹیشن کی نوبت آئے تو پھر ملک کے طول و عرض میں ‘‘بھارت بھبھوت بھنڈار’’ کھول دیئےجائیں۔ اس وقت ہم سب سرجوڑکراورایک دوسرے کے کان پکڑ کر ایسےبھبھوت ایجادکرنے کی کوشش کریں گےجن میں چائے کے خواص ہوں گے یعنی گرمی میں ٹھنڈک اور سردی میں گرمی پیدا کریں گے۔ستر پوشی سے چشم پوشی کرنا پڑے گی۔اگرہم اتنی ترقی نہیں کرسکتے ہیں اور قوم وملک کی نازک اورناگفتہ بہ حالت دیکھتےہوئے بھی سترکوقربان نہیں کرسکتے تو بھارت بھبھوت بھنڈار کے ذریعہ ایسے انجینئر اورآرٹسٹ پیدا کےف جائیں گے جو ستر کو کچھ کا کچھ کر دکھائیں جیسےآج کل لڑنےوالی حکومتیں دشمن کو دھوکا دینے کے لیے دھوکے کی ٹٹی قائم کر دیا کرتے ہیں جس کو انگریزی میں(Smoke Screen) کہتے ہیں اورجس کےتصرف سےدیوارودردرودیوارنظر آنے لگتے ہیں۔ میں تفصیل میں نہیں پڑنا چاہتا۔ صرف اتنا عرض کردینا کافی سمجھتا ہوں کہ اس بھبھوتیائی آرٹ کے ذریعہ ہم کسی حصہ جسم کو یا ان میں سے ہر ایک کو اس طرح مسخ یا مزین کر سکیں گے کہ وہ کچھ کا کچھ نظر آئے۔ بقول ایک شاعر کے جو اس آرٹ کے رمز سے غالباً واقف تھے یعنی۔ وحشت میں ہرایک نقشہ الٹا نظرآتا ہے مجنوں نظر آتی ہے لیلیٰ نظر آتا ہے شعراء نے ہمارے آپ کے اعضاء و جوارح کے بارے میں تشبیہہ استعارہ یا جنون میں جو کچھ کہا ہے بھارت بھبھوت کے آرٹسٹ اسی قسم کی چیز ہمارے آپ کے جسم پر بنا کر غزل کو نظم معرا کر دکھائیں گے اس وقت آرٹ برائے آرٹ اور آرٹ برائے زندگی کا تنازعہ بھی ختم ہوجائے گا۔ بہت ممکن ہے بھبھوت بھنڈار میں ایسے سرمے بھی تیار کیے جاسکیں جن کی ایک سلائی پھیرنے سے چھوٹی چیزیں بڑی اوربڑی چیزیں چھوٹی نظر آنے لگیں یا دور کی چیز قریب اور قریب کی دور نظر آئے۔ اس طور پر شعرا آرٹ اور تصوف کو ایک دوسرے سے مربوط کر سکیں گے۔ دوسری طرف ستر دوستوں یا ستر دشمنوں کی بھی اشک شوئی ہو جائے گی۔ اس وقت دھوبیوں کو معلوم ہوگا کہ ڈکٹیٹر کا انجام کیا ہوتا ہے۔ علی گڑھ میں میرے زمانۂ طالب علمی کے ایک دھوبی کا حال سنےھ جواب بہت معمر ہوگیا ہے وہ اپنے گاؤں میں بہت معزز مانا جاتا ہے۔دو منزلہ وسیع پختہ مکان میں رہتا ہے۔کاشتکاری کا کاروبار بھی اچھے پیمانہ پر پھیلا ہوا ہے۔ گاؤں میں کالج کے قصے اس طور پر بیان کرتا ہے جیسے پرانے زمانے میں سورماؤں کی بہادری و فیاضی اور حسن و عشق کے افسانے اور نظمیں بھاٹ سنایا کرتے تھے۔ کہنے لگا میاں وہ بھی کیا دن تھے اور کیسے کیسے اشراف کالج میں آیا کرتے تھے۔ قیمتی خوبصورت نرم و نازک کپڑے پہنتے تھے جلد اتارتے تھے دیر میں منگاتے تھے ہرمہینہ دوچارکپڑےادھرادھرکردئیے وہاں خبر بھی نہ ہوئی یہاں مالا مال ہوگئے۔ ان کے اتارے کپڑوں میں بھی میرے بچے اور رشتہ دار ایسے معلوم ہوتے تھے جیسے علی گڑھ کی نمائش۔ آج کل جیسے کپڑے نہیں ہوتے تھے گویا بوری اور چھولداری لٹکائے پھر رہے ہیں۔ ایک کپڑا دھونا پچاس ہاتھ مگدر ہلانے کی طاقت لیتا ہے۔ کیسا ہی دھوؤ بناؤ آب نہیں چڑھتا۔ اس پر یہ کہ آج لے جاؤ کل دے جاؤ کوئی کپڑا بھول چوک میں آجائے تو عمر بھر کی آبرو خاک میں ملادیں۔ میاں ان رئیسوں کے کپڑے دھونے میں مزہ ا ٓتا تھا جیسے دودھ ملائی کا کاروبار۔دھونے میں مزا، استری کرنے میں مزا، دیکھنے میں مزا، دکھانے میں مزا،کنوئیں کے پاس کپڑے دھوتے تھےکہ کوتوالی کرتے تھے۔ پاس پڑوس دور سے کھڑے تماشا دیکھتے۔ پولیس کا سپاہی بھی سلام ہی کر کے گزرتا۔ مجال تھی جو کوئی پاس آجائے۔ برادری میں رشتہ ناتا اونچا لگتا کہ سید صاحب کے کالج کا دھوبی ہے۔ پنچایت چکانے دور۔ دور سے بلاواآتا۔ ایسے ایسے کپڑے پہن کر جاتا کہ گاؤں کے مکھیا اور پٹواری دیکھنے آتے۔ جو بات کہتا سب ہاتھ جوڑ کر مانتے کوئی چین چپڑ کرتا تو کہہ دیتا بچہ ہیکڑی دکھائی تو سید صاحب کے ہاں لے چل کر وہ گت بنوائی ہو کہ چھٹی کا دودھ یاد آجائے گا پھر کوئی نہ منگتا! شہر میں کہیں شادی بیاہ ہوتا تو مجھے سب سے پہلے بلایا جاتا لڑکی لڑکے کا بزرگ کہتا بھیا انگنو لڑکی کی شادی ہے عزت کا معاملہ ہے برادری کا سامنا ہے مدد کا وقت ہے میں کہتا نچنت رہو۔ تمہاری نہیں میری بیٹی۔ کالج پھلے پھولے فکر مت کرو پرماتما کا دیا سب کچھ موجود ہے۔ میاں مانو کالج آتا لڑکوں سے کہتا حضور لرکی کی شادی ہے اب کے جمعہ کو کپرے نہ آئیں گے سب کہتے انگنو کچھ پروا نہیں ہم کو بھی بلانا جو چیز چاہو لے جائو دب کے کام نہ کرنا۔ میاں پھر کیا تھا گز بھر کی چھاتی ہوجاتی! ایک باری کے کپڑے، دری، فرش، چاندنی، تولئے، دسترخوان سب دے دیتا۔ محفل چماچم ہوجاتی ایسا معلوم ہوتا جیسے کالج کا کوئی جلسہ ہے۔ براتی دنگ رہ جاتے میاں ہیرا پھیری اور ہڑگم میں ایک آدھ گم ہوجاتا کچھ رکھ لیتا یا ادھر ادھر دے ڈالتا۔ دوسرے تیسرے جمعہ کو کالج آتاہرلڑکا بجائےاس کے کہ کپڑے پرٹوٹ پڑتا دور ہی سے پکارتا کیوں انگنو اکیلے اکیلے لڑکی کی شادی کرڈالی ہم کو نہیں بلایا۔ سب کو سلام کرتا کہتا میاں تمہارا لکھنے پڑھنے کا ہرج ہوتا کہاں جاتے تمہارے اقبال سے سب کام ٹھیک ہوگیا۔ میاں لوگ نواب تھے کہتے انگنو ہم کو فرصت نہیں میلے کپرے لے لینا۔ دھلے کپڑے بکس میں رکھ دینا چابی تکیے کے نیچے ہوگی بکس بند کر کے مجھے دے جانا۔ان کو کیاخبرکون سے کپڑے لےگیا تھا کیا واپس کر گیا۔ کبھی کچھ یاد آگیا تو پوچھ بیٹھے انگنو فلاں کپڑا نظرنہیں آیا میں کہہ دیتا سرکار وہ لڑکی کی شادی نہ تھی۔ کہتے ہاں ہاں ٹھیک کہا یاد نہیں رہا اور کیوں تم نے ہم کو نہیں بلایا۔ میرا یہ بہانہ اور ان کا یہ کہنا چلتا رہتا اور پھر ختم ہو جاتا۔ کالج میں کرکٹ کی بڑی دھوم تھی ایک دفعہ کپتان صاحب نے گھاٹ پر سے بلوابھیجا۔کہنے لگے انگنو دلی سی کچھ کھیلنے والے آگئے ہیں۔ ہم لوگوں کو کھیلنے کی فرصت نہیں لیکن ان کو بغیر میچ کھلائے واپس بھی نہیں کیا جاسکتا۔ چنانچہ یہ میچ کالج کے بیررکھیلیں گے۔تم ممتاز کے یہاں چلے جاؤ وہ بتلائے گا کہ کتنے کوٹ پتلون اور قمیص مفلر وغیرہ درکار ہوں گے۔ بیروں کی پوری ٹیم کو کرکٹ کا یونیفارم مہیا کر دو کل گیارہ بجے دن کو میں سب چیزیں ٹھیک دیکھوں، میاں کپتان صاحب کا یہ جنڈیلی آرڈر پورا کیا گیا۔ ٹیم کھیلی اور جیت گئی۔ کپتان صاحب نے سب کو دعوت دی اور بھرے مجمع میں کہا‘‘انگنو کا شکریہ!’’ اکثرسوچتا ہوں کہ دھوبی اور لیڈر میں اتنی مماثلت کیوں ہے۔ دھوبی لیڈر کی ترقی یافتہ صورت ہے یا لیڈر دھوبی کی! دونوں دھوتے پچھاڑتے ہیں۔دھوبی گندے چیکٹ کپڑے علیحدہ لے جاکر دھوتا ہے اور صاف اور سجل کر کے دوبارہ پہننے کے قابل بنا دیتا ہے۔ لیڈر برسرعام گندے کپڑے دھوتا ہے اورگندگی اچھالتا ہے(Washing Dirty Linen in Public ) کایہی تو مفہوم ہے۔ لیڈر کا مقصد نجاست کو دور کرنے کا اتنا نہیں ہوتا جتنا نجاست پھیلانے کا۔ دھوبیوں کے لیے کپڑے دھونے کے گھاٹ مقرر ہیں۔ لیڈر کے لیے پلیٹ فارم حاضر ہیں۔ اس میں شک نہیں دھوبی کپڑے پھاڑتا ہے غائب کردیتا ہے اور ان کا آب ورنگ بگاڑ دیتا ہے۔ لیکن لیڈر کی طرح وہ گندگی کو پائیدار یا رنگین نہیں بناتا نہ متعدی کرتا ہے۔ ہمارے معلم بھی دھوبی سے کم نہیں وہ شاگرد کو اسی طرح دھوتے پچھاڑتے مروڑتے اور اس پر استری کرتے ہیں جیسے دھوبی کرتا ہے۔ آپ نے بعض دھوبیوں کو دیکھا ہوگا جو دھلائی کی زحمت سے بچنے اور مالک کو دھوکا دینے کے لیے سفید کپڑے پر نیل کا ہلکا سا رنگ دے دیتے ہیں۔ دھوبی کو اس کی مطلق پروا نہیں کہ سر پر سے گھما گھما کر کپڑے کو پتھر پر پٹکنا اینٹھنا اور نچوڑنا اور اس کا لحاظ نہ کرنا کہ کپڑے کے تار وپود کا رنگ کا کیا حشر ہوگا، بٹن کہاں جائیں گے لباس کی وضع قطع کیا سے کیا ہوجائے گی، استری ٹھیک گرم ہےیا نہیں ٹھنڈی استری کرنا چاہئے یا گرم بالکل اسی طرح معلم کو اس کی پروا نہیں کہ طالب علم کس قماش کا ہے اس پر کیا رنگ چرھا ہوا ہے، اور اس کے دل و دماغ کا کیا عالم ہے وہ اسے دے دے مارتا ہے اور بھرکس نکال دیتا ہے۔ وہ طالب علم کی استعداد اس کے میلانات اور اس کی الجھنوں کو سمجھنے کی کوشش نہیں کرتا۔ صرف اپنا رنگ چڑھانے کی کوشش کرتا رہتا ہے چنانچہ گاذری کے سارے مراحل طے کرنے کے بعد جب طالب علم دنیا کے بازار یا گاہک کے ہاتھ میں آتا ہے تو اس کا جسم ذہن و دماغ سب جواب دے چکے ہوتے ہیں۔ اس پر رنگ بھی ناپائدار ہوتا ہے۔ کلف دے کر اس پر جو بے تکی اور بے تکان استری کی ہوتی ہے وہ حوادث روزگار کے ایک ہی چھینٹے یا جھونکے سے بدرنگ اور کاواک ہوجاتی ہے۔ دھوبی کی یہ روایات معلمی میں پورے طور پر سرایت کر چکی ہیں۔ ہندوستانی دھوبی کے بارے میں آپ نے ایک مشہور ستم ظریف کا فقرہ سنا ہوگا جس نے اس کو کپڑے پچھاڑتے دیکھ کر کہا تھا کہ دنیا میں عقیدہ بھی کیا چیز ہے، اس شخص کو دیکھئے کپڑے سے پتھر توڑ ڈالنے کے درپے ہے۔ اگر ستم ظریف نے ہندوسادنی شعراء یا عشاق کا مطالعہ کیا ہوتا جو ننگ سجدہ سے محبوب کا سنگ آستاں گھس کر غائب کر دیتے ہیں تواس پرمعلوم نہیں کیا گزرجاتی۔ ویسے تو پرانے شعراء کا وطیرہ تھا حال کےشعراءکارنگ کچھ اورہے۔انہوں نے سوسائٹی کے میلے گندے شارع عام پر دھونے پچھاڑنے کا نیا فن ایجاد کیا ہے۔ اس قبیل کے شعراء سوسائٹی کی خرابیوں کو دور کرنے کےاتنے قائل اور شاید قابل بھی نہیں رہے جتنا ان خرابیوں کا شکار ہو چکے ہیں یا اس کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ وہ ان خرابیوں کی نمائش کرنے اوراس کوایک فن کادرجہ دینے کےدرپے ہیں۔ کمزوریوں کو تسلیم کرنا اوران کو دور کرنے کی کوشش کرنا اورمستحسن آثارہیں لیکن ان کو آرٹ یا الہام کا درجہ دینا کمزوری اور بد توفیقی ہے۔ شاعری میں دھوبی کا کاروبار برانہیں لیکن دھوبی اور دھوبی کے گدھے میں تو فرق کرنا ہی پڑے گا! میرا ایک دھوبی سے سابقہ رہا ہے جسے بہانے تراشنے میں وہ مہارت حاصل ہے جو اردو اخبارات و رسائل کی ایڈیٹر کو بھی نصیب نہیں۔ پرچہ کے توقف سے شائع ہونے پر یا بالکل نہ شائع ہونے پر یہ ایڈیٹر جس جس طرح کے عذر پیش کرتے ہیں اورعاشقانہ شعر پڑھتے ہیں اور فلمی گانے سناتے ہیں وہ ایک مستقل داستان ہے اور فن بھی۔ لیکن میرا دھوبی اور اس کی بیوی جس قسم کے حیلے تراشتے ہیں وہ انہیں کا حصہ ہے۔ مثلاً موسم خراب ہے اس کے یہ معنی ہیں کہ دھوپ نہیں ہوئی کہ کپڑے سوکھتے یا گردوغبار کا یہ عالم تھا کہ دھلے کپڑے بن دھلے ہو گئےیا دھوپ اتنی سخت تھی کہ دھونے کے لئے کپڑے کا ترکرنا محال ہوگیا! صحت خراب ہے یعنی دھوبی یا دھوبن یا اس کے لڑکے بالے یا اس کے دور و نزدیک کے رشتہ دار ہر طرح کی بیماریوں میں مبتلا رہے۔ قسمت خراب ہے یعنی ان میں سے ایک ورنہ ہر ایک مرگیا۔ زمانہ خراب ہے، یعنی چوری ہوگئی، فوجداری ہوگئی یا گدھا کا نجی ہاؤس بھیج دیا گیا۔ کپڑا خراب ہے یعنی پھٹ گیا بدرنگ ہوگیا یا گم ہوگیا۔ عاقبت خراب ہے یعنی ریڈیو پر طرح طرح کی خبریں آتی ہیں اور مٹی خراب ہے۔ یعنی وہ میرے کپڑے دھوتا ہے۔ میرے خلاف اورغالباً ناظرین میں سے بھی بعض حضرات کے خلاف دھوبیوں کو یہ شکایت ہے کہ میں کپڑےاتارنے اور دھوبی کے سپرد کرنے میں زیادہ دیرلگاتا ہوں یہی نہیں بلکہ دھوبی کے حوالہ کرنے سے پہلے وہ لوگ جو دھوبی نہیں ہیں یا دھوبی سے بھی گئے گزرے ہیں میرے اترے ہوئے کپڑوں میں میل دور کرنے کی اپنے اپنے طور پر کوشش اور تجربے کرتے ہیں۔ کوئی چونارگڑ کر کوئی کتھا، پیالی پلیٹ اور دیگچی پونچھ کر کوئی جھاڑو کا کام لے کر کوئی آلو ٹماٹر اور کوئی لنگوٹ باندھ کراور جب یہ تمام تجربے یا مراحل طے ہو لیتے ہیں تو وہ کپڑے دھوبی کے حوالہ کئے جاتے ہیں۔ دنیا کو رنگ برنگ کے خطروں سے سابقہ رہا ہے۔مثلاً لال خطرہ پیلا خطرہ سفید خطرہ کالا خطرہ ان سے کسی نہ کسی طرح اور کسی نہ کسی حد تک گلو خلاصی ہوتی رہتی ہے لیکن یہ دھوبی خطرہ زندگی میں اس طرح خارش بن کرسمایا گیا ہے کہ نجات کی کوئی صورت نظر نہیں آتی۔ مصیبت و مایوسی میں انسان تو ہم پرست ہوجاتا ہے اور ٹوٹے ٹوٹکے اورفال و تعویذ پر اتر آتا ہے میں نے دھوبی کو ذہن میں تول کر غالب سے رجوع کیا تو فال میں یہ مصرعہ نکلا۔ تیرے بے مہر کہنے سے وہ تجھ پر مہرباں کیوں ہو گھبرا گیا لیکن چونکہ غالب یہ بھی کہہ چکے تھے کہ اگلے زمانہ میں کوئی میر بھی تھا اس لئے میر صاحب کی خدمت میں حاضر ہوا۔ وہاں سےیہ جواب ملا۔ ہم ہوئے تم ہوئے کہ میر ہوئے اسی دھوبی کے سب امیر ہوئے بایں ہمہ دھوبی جس دن دھلے کپڑے لاتا ہے اور میلے کپڑے لے جاتا ہے۔ مجھے ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے گھر میں برکتیں آئیں اور بلائیں دور ہوئیں چاندنی،چادریں،غلاف،پردے، دسترخوان، میزپوش سب بدل گئے نہا دھو کر چھوٹے بڑوں نے صاف ستھرے کپڑے پہنے۔ طبیعت شگفتہ ہوگئی اور کچھ نہیں تو تھوڑی دیر کے لیے یہ محسوس ہونے لگا کہ زندگی بہرحال اتنی پرمحن نہیں ہے جتنی کہ بتائی جاتی ہے۔
    • اب اور تب پطرس بخاری   جب مرض بہت پرانا ہوجائے اور صحت یا بی کی کوئی امید باقی نہ رہے تو زندگی کی تمام مسرتیں محدود ہو کر بس یہیں تک رہ جاتی ہیں کہ چارپائی کے سرہانے میز پر جو انگور کا خوشا رکھا ہے اس کے چند دانے کھا لئے، مہینے دو مہینے کے بعد کوٹھے پر غسل کر لیا یا گاہے گاہے ناخن ترشوا لئے۔ مجھے کالج کا مرض لاحق ہوئے اب کئی برس ہو چکے ہیں۔ شباب کا رنگین زمانہ امتحانوں میں جوابات لکھتے لکھتے گزر گیا اور اب زندگی کے جو دو چار دن باقی ہیں وہ سوالات مرتب کرتے کرتے گزر جائیں گے۔ ایم اے کا امتحان گویا مرض کا بحران تھا۔ یقین تھا کہ اس کے بعد یا مرض نہ رہے گا یا ہم نہ رہیں گے۔ سو مرض تو بدستور باقی ہے اور ہم…ہر چند کہیں کہ ہیں…نہیں ہیں۔ طالب علمی کا زمانہ بےفکری کا زمانہ تھا۔ نرم نرم گدیلوں پر گزرا، گویا بستر عیش پر دراز تھا۔ اب تو صاحبِ فراش ہوں۔ اب عیش صرف اس قدر نصیب ہے کہ انگور کھا لیا۔ غسل کرلیا۔ ناخن ترشوا لئے۔ تمام تگ ودو لائبریری کے ایک کمرے اور اسٹاف کے ایک ڈربے تک محدود ہے اور دونوں کے عین درمیان کا ہر موڑ ایک کمین گاہ معلوم ہوتا ہے۔ کبھی راوی سے بہت دلچسپی تھی۔ روزانہ علی الصبح اس کی تلاوت کیا کرتا تھا اب اس کے ایڈیٹر صاحب سے ملتے ہوئے ڈرتا ہوں کہ کہیں نہ کہیں سلام روستائی کھینچ ماریں گے۔ ہال میں سے گزرنا قیامت ہے۔ وہم کا یہ حال ہے کہ ہر ستون کے پیچھے ایک ایڈیٹر چھپا ہوا معلوم ہوتا ہے۔کالج کے جلسوں میں اپنی دریدہ دہنی سے بہت ہنگامہ آرائیاں کیں۔ صدر جلسہ بننے سے ہمیشہ گھبرایا کرتا ہوں کہ یہ ”دہن سگ بہ لقمہ دوختہ بہ“ والا معاملہ ہے۔ اب جب کبھی جلسہ کا سن پاتا ہوں ایک خنک سا ضعف بدن پر طاری ہوجاتا ہے— جانتا ہوں کہ کرسیٴِ صدارت کی سولی پر چڑھنا ہوگا اور سولی بھی ایسی کہ انا الحق کا نعرہ نہیں لگا سکتا۔ قاضی صاحب قبلہ نے اگلے دن کالج میں ایک مشاعرہ کیا۔ مجھ سے بدگمانی اتنی کہ مجھے اپنے عین مقابل ایک نمایاں اور بلند مقام پر بٹھا دیا اور میری ہر حرکت پر نگاہ رکھی۔ میرےاردگرد محفل گرم تھی اور میں اس میں کنچن چنگا کی طرح اپنی بلندی پر جما بیٹھا تھا۔جس دن کالج میں تعطیل ہوا کرتی مجھ پر اداسی سی چھا جاتی۔ جانتا کہ آج کے دن تہمد پوش، تولیہ بردار، صابن نواز ہستیاں دن کے بارہ ایک بجے تک نظر آتی رہیں گی۔ دن بھر لوگ گنے چوس چوس کر جا بجا پھوگ کے ڈھیر لگا دیں گے۔ جو رفتہ رفتہ آثار صنا دید کا سا مٹیالہ رنگ اختیار کرلیں گے۔ جہاں کسی کو ایک کرسی اور اسٹول میسر آگیا وہیں کھانا منگوا لے گا اور کھانا کھا چکنے پر کوؤں اور چیلوں کی ایک بستی آباد کرتا جائے گا تاکہ دنیا میں نام برقرار رہے۔اب یہ حال ہے کہ مہینوں سے چھٹی کی تاک میں رہتا ہوں۔ جانتا ہوں کہ اگر اس چھٹی کے دن بال نہ کٹوائے تو پھر بات گرمی تعطیلات پر جا پڑے گی۔ مرزا صاحب سے اپنی کتاب واپس نہ لایا تو وہ بلا تکلف ہضم کرجائیں گے۔ مچھلی کے شکار کو نہ گیا تو پھر عمر بھر زندہ مچھلی دیکھنی نصیب نہ ہوگی۔ اب تو دلچسپی کے لئے صرف یہ باتیں رہ گئی ہیں کہ فورتھ ائیر کی حاضری لگانے لگتا ہوں تو سوچتا ہوں کہ اس دروازے کے پاس جو نوجوان سیاہ ٹوپی پہنے بیٹھے ہیں اور اس دروازے کے پاس جو نوجوان سفید پگڑی پہنے بیٹھے ہیں۔ حاضری ختم ہونے تک یہ دونوں جادو کی کرامات سے غائب ہوجائیں گے اور پھر ان میں سے ایک صاحب تو ہال میں نمودار ہوں گے اور دوسرے بھگت کی دکان میں دودھ پیتے دکھائی دیں گے۔ آج کل کے زمانے میں ایسی نظر بندی کا کھیل کم دیکھنے میں آتا ہے۔ یا صاحبِ کمال کے کرتب کا تماشا کرتا ہوں جو عین لیکچر کے دوران میں کھانستا کھانستا یک لخت اُٹھ کھڑا ہوتا ہے اور بیماروں کی طرح دروازے تک چل کر وہاں سے پھر ایسا بھاگتا ہے کہ پھر ہفتوں سراغ نہیں ملتا۔ یا ان اہل فن کی داد دیتا ہوں جو روزانہ دیر سے آتے ہیں اور یہ کہہ کر اپنی حاضری لگوا لیتے ہیں کہ صاحب غریب خانہ بہت دور ہے۔ جانتا ہوں کہ دولت خانہ ہاسٹل کی پہلی منزل پر ہے لیکن منہ سے کچھ نہیں کہتا۔ میری بات پر یقین انہیں بھلا کیسے آئے گا اور کبھی ایک دو منٹ کو فرصت نصیب ہو تو دل بہلانے کے لئے یہ سوال کافی ہے کہ ہال کی گھڑی مینار کی گھڑی سے تین منٹ پیچھے ہے۔ دفتر کی گھڑی ہال کی گھڑی سے سات منٹ آگے ہے۔ چپڑاسی نے صبح دوسری گھنٹی مینار کے گھڑیال سے پانچ منٹ پہلے بجائی اور تیسری گھنٹی ہال کی گھڑی سے نو منٹ پہلے تو مرکب سود کے قاعدے سے حساب لگا کر بتاؤ کہ کس کا سر پھوڑا جائے۔ وہی میں نے کہا نا کہ انگور کھا لیا، غسل کرلیا، ناخن ترشوالئے ؎ دل نے دنیا نئی بنا ڈالی اور ہمیں آج تک خبر نہ ہوئی
  • Topics

×
×
  • Create New...