Qateel Shifai Poetry - قتیل شفائی کی شاعری

  • جو شخص بہانہ بنانے میں بہت اچھا ہو ، وہ کسی اور کام میں اچھا نہیں ہو سکتا
  • پیسہ بدترین آقا ہے، مگر بہترین غلام بھی ہے
  • کسی فرد یا قوم کو برباد کرنا ہے تو اس کی امید کو مار ڈالیے اور اگر اسے تعمیر کرنا ہے اس کی امید کا دیا روشن کیجئے
  • کامیابی سوچ سے ملتی ہے
  • زندگی کی دوڑ میں دوسروں سے آگے نکلنے کیلئے تیز چلنا ضروری نہیں، بلکہ ہر رکاوٹ کے باوجود چلتے رہنا اور مسلسل چلتے رہنا ضروری ہے
  • جب باتیں آمنے سامنے ہوتی ہیں تو جھوٹ اور غلط فہممی کا خاتمہ ہو جاتا ھے
  • بہت اونچے پہاڑ پر چڑھنے کے لئیے قدم آہستہ آہستہ اٹھانا پڑتے ہیں
  • تین چیزیں نیکی کی بنیاد ہیں، تواضع بے توقع, سخاوت بے منت اور خدمت بے طلبِ مکافات
  • غربت اور افلاس کی وجہ پیداوار کی کمی نہیں، بلکہ اسکی غلط تقسیم ہے
  • دولت ہونے سے آدمی اپنے آپ کو بھول جاتا ہے اور دولت نہ ہونے سے لوگ اس کو بھول جاتے ہیں
  • مصروف زندگی نماز کو مشکل بنا دیتی ہے , لیکن نماز مصروف زندگی کو بھی آسان بنا دیتی ہے
  • گناہ کو پھیلانے کا ذریعہ بھی مت بنو, کیونکہ ہوسکتا ہے آپ تو توبہ کرلو, لیکن جس کو آپ نے گناہ پر لگایا ہے وہ آپ کی آخرت کی تباہی کا سبب بن جائے
  • اپنی زندگی میں ہر کسی کو اہمیت دو, جو اچھا ہوگا وہ خوشی دے گا اور جو برا ہوگا وہ سبق دے گا
  • درخت جتنا اونچا ہو گا اس کا سایہ اتنا ہی چھوٹا ہو گا, اس لیے اونچا بننے کی بجائے بڑا بننے کی کوشش کرو
  • جو شخص کوشش اور عمل میں کوتاہی کرتا ہے, پیچھے رہنا اس کا مقدر ہے
  • جو لوگ میانہ روی اختیار کرتے ہیں, کسی کے محتاج نہیں ہوتے
  • حقیقی بڑا تو وہ ہے جو اپنے ہر چھوٹے کو پہچانتا ہوں اور اس کی ضروریات کا خیال رکھتا ہو

May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#1
اس پر تمہارے پیار کا الزام بھی تو ہے

اس پر تمہارے پیار کا الزام بھی تو ہے
اچھا سہی قتیلؔ پہ بدنام بھی تو ہے

آنکھیں ہر اک حسین کی بے فیض تو نہیں
کچھ ساگروں میں بادۂ گلفام بھی تو ہے

پلکوں پہ اب نہیں ہے وہ پہلا سا بار غم
رونے کے بعد کچھ ہمیں آرام بھی تو ہے

آخر بری ہے کیا دل ناکام کی خلش
ساتھ اس کے ایک لذت بے نام بھی تو ہے

کر تو لیا ہے قصد عبادت کی رات کا
رستے میں جھومتی ہوئی اک شام بھی تو ہے

ہم جانتے ہیں جس کو کسی اور نام سے
اک نام اس کا گردش ایام بھی تو ہے

اے تشنہ کام شوق اسے آزما کے دیکھ
وہ آنکھ صرف آنکھ نہیں جام بھی تو ہے

منکر نہیں کوئی بھی وفا کا مگر قتیلؔ
دنیا کے سامنے مرا انجام بھی تو ہے
 
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#2
کیا جانے کس خمار میں کس جوش میں گرا
کیا جانے کس خمار میں کس جوش میں گرا​
وہ پھل شجر سے جو مری آغوش میں گرا​
کچھ دائرے سے بن گئے سطح خیال پر​
جب کوئی پھول ساغر مے نوش میں گرا​
باقی رہی نہ پھر وہ سنہری لکیر بھی​
تارا جو ٹوٹ کر شب خاموش میں گرا​
اڑتا رہا تو چاند سے یارا نہ تھا مرا​
گھائل ہوا تو وادی گل پوش میں گرا​
بے آبرو نہ تھی کوئی لغزش مری قتیلؔ​
میں جب گرا جہاں بھی گرا ہوش میں گرا​
 
Last edited:
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#3
دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایہ نہ تھا

دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایہ نہ تھا
اس طرح برسات کا موسم کبھی آیا نہ تھا

سرخ آہن پر ٹپکتی بوند ہے اب ہر خوشی
زندگی نے یوں تو پہلے ہم کو ترسایا نہ تھا

کیا ملا آخر تجھے سایوں کے پیچھے بھاگ کر
اے دل ناداں تجھے کیا ہم نے سمجھایا نہ تھا

اف یہ سناٹا کہ آہٹ تک نہ ہو جس میں مخل
زندگی میں اس قدر ہم نے سکوں پایا نہ تھا

خوب روئے چھپ کے گھر کی چار دیواری میں ہم
حال دل کہنے کے قابل کوئی ہم سایہ نہ تھا

ہو گئے قلاش جب سے آس کی دولت لٹی
پاس اپنے اور تو کوئی بھی سرمایہ نہ تھا

وہ پیمبر ہو کہ عاشق قتل گاہ شوق میں
تاج کانٹوں کا کسے دنیا نے پہنایا نہ تھا

اب کھلا جھونکوں کے پیچھے چل رہی تھیں آندھیاں
اب جو منظر ہے وہ پہلے تو نظر آیا نہ تھا

صرف خوشبو کی کمی تھی غور کے قابل قتیلؔ
ورنہ گلشن میں کوئی بھی پھول مرجھایا نہ تھا​
 
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#4
اب تو بیداد پہ بیداد کرے گی دنیا

اب تو بیداد پہ بیداد کرے گی دنیا
ہم نہ ہوں گے تو ہمیں یاد کرے گی دنیا

زندگی بھاگ چلی موت کے دروازے سے
اب قفس کون سا ایجاد کرے گی دنی

ہم تو حاضر ہیں پر اے سلسلۂ جور قدیم
ختم کب ورثۂ اجداد کرے گی دنیا

سامنے آئیں گے اپنی ہی وفا کے پہلو
جب کسی اور کو برباد کرے گی دنیا

کیا ہوئے ہم کہ نہ تھے مرگ بشر کے قائل
لوگ پوچھیں گے تو فریاد کرے گی دنیا
 
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#5
Zindagi Mein To Sabhi Pyar Kiya Karte Hain

Zindagi Mein To Sabhi Pyar Kiya Karte Hain
Main To Mar Kar Bhi Meri Jan Tujhe Chahon Ga

Tu Mila Hai To Ye Aehsas Howa Hai Mujh Ko
Ke Meri Umer Mohabbat Ke Liye Thori Hai

Ek Zara Sa Gham Dora Ka Bhi Haq Hai Jis Per
Main Ne Wo Sans Bhi Tere Liye Rakh Chhori Hai

Tujh Pe Ho Jaon Ga Qurban Tujhe Chaon Ga
Main To Mar Kar Bhi Meri Jan Tujhe Chahon Ga

Apne Naghmaat Mein Jazbat Rachane Ke Liye
Main Ne Dharkan Ki Tarha Dil Mein Basaya Hai Tujhe

Main Tasawar Bhi Judai Ka Bhala Kese Karon
Main Ne Qismat Ki Lakiron Se Churaya Hai Tujhe

Pyar Ka Ban Ke Nigheban Tujhe Chahon Ga
Main To Mar Kar Bhi Meri Jan Tujhe Chahon Ga​
 
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#6
Apne Hathon Ki Lakiron Mein Basale Mujhko


Apne Hathon Ki Lakiron Mein Basale Mujhko
Main Hun Tera Nasib Apna Bana-Le Mujhko

Mujhse Tu Puchne Aya Hai Wafa Ke Maeni
Yeh Teri Sada Dili Mar Na Dale Mujhko

Main Samandar Bhi Hun Moti Bhi Hun Ghotazan Bhi
Koi Bhi Nam Mera Ley Ke Bulale Mujhko

Tune Dekha Nahin Aine Se Aagey Kuch Bhi
Khuda-Parasti Mein Kahin Tu Na Ganwale Mujhko

Kal Ki Bat Aur Hai Main Ab Sa Rahun Ya Na Rahun
Jitna Ji Chahe Tera Aj Satale Mujhko

Khud Ko Main Bant Na Dalun Kahin Daman Daman
Kar Diya Tune Agar Mere Hawale Mujhko

Main Jo Kanta Hun To Chal Mujh Se Bacha-Kar Daman
Main Hun Gar Phool To Jurey Mein Sajale Mujhko

Main Khule Dar Ke Kisi Ghar Ka Hun Saman Pyare
Tu Dabe Paon Kabhi Aa Ke Churale Mujhko

Tark-E-Ulfat Ki Qasam Bhi Koi Hoti Hai Qasam
Tu Kabhi Yad To Kar Bhulane-Wale Mujhko

Bada Phir Bada Hai Main Zehar Bhi Pi Jaoun "Qateel"
Shart Ye Hai Koi Bahon Mein Sambhale Mujhko​
 
May 28, 2018
240
5
18
Karachi
#7
Pehle To Apne Dil Ki Raza Jaan Jaiye

Pehle To Apne Dil Ki Raza Jaan Jaiye
Pher Jo Nigahe Yar Kahe Maan Jaiye

Kuch Keh Rahi Hein Ap Ke Sine Ki Dharkanein
Meri Sunein To Dil Ka Kaha Maan Jaiye

Aik Dhop Si Jami Hai Nigahon Ke Aas Paas
Yeh Ap Hein To Ap Pe Qurban Jaiye

Shayad Hazoor Se Koi Nisbat Humein Bhi Ho
Aankhon Mein Jhank Kar Humein Pehchan Jaiye