Jump to content
  • Join Forums Pakistan .....

    Join Forums Pakistsan now, its FREE !!!

Mehak

Altaf Hussain Hali Poetry الطاف حسین حالی کی شاعری

Recommended Posts

Hai Justajoo Ke Khoob Se Hai

 

Hai Justajoo Ke Khoob Se Hai Khoobtar Kahan

Ab Dekhiye Theharti Hai Ja Kar Nazar Kahan

 

Yarab Is Ikhtilat Ka Anjam Ho Bakhair

Tha Us Ko Hum Se Rabt, Magar Is Qadar Kahan

 

Ek Umr Chahye Ke Gawara Ho Naish-E-Ishq

Rakkhi Hai Aaj Lazzat-E-Zakhm-E-Jigar Kahan

 

Hum Jis Pe Mar Rahe Hain Wo Hai Baat Hi Kuch Aur

Alam Mein Tujhse Lakh Sahi Tu Magar Kahan

 

Hoti Nahin Qubool Dua Tark-E-Ishq Ki

Dil Chahta Na Ho To Zuban Mein Asar Kahan

 

'Hali' Nishat Nagma-O-Mai Dhundhte Ho Ab

Aye Ho Waqt-E-Subh, Rahe Rat Bhar Kahan

Share this post


Link to post
Share on other sites

گو جوانی میں تھی کج رائی بہ

 

گو جوانی میں تھی کج رائی بہت

پر جوانی ہم کو یاد آئی بہت

 

زیر برقع تو نے کیا دکھلا دیا

جمع ہیں ہر سو تماشائی بہت

 

ہٹ پہ اس کی اور پس جاتے ہیں دل

راس ہے کچھ اس کو خود رائی بہت

 

سرو یا گل آنکھ میں جچتے نہیں

دل پہ ہے نقش اس کی رعنائی بہت

 

چور تھا زخموں میں اور کہتا تھا دل

راحت اس تکلیف میں پائی بہت

 

آ رہی ہے چاہ یوسف سے صدا

دوست یاں تھوڑے ہیں اور بھائی بہت

 

وصل کے ہو ہو کے ساماں رہ گئے

مینہ نہ برسا اور گھٹا چھائی بہت

 

جاں نثاری پر وہ بول اٹھے مری

ہیں فدائی کم تماشائی بہت

 

ہم نے ہر ادنیٰ کو اعلیٰ کر دیا

خاکساری اپنی کام آئی بہت

 

کر دیا چپ واقعات دہر نے

تھی کبھی ہم میں بھی گویائی بہت

 

گھٹ گئیں خود تلخیاں ایام کی

یا گئی کچھ بڑھ شکیبائی بہت

 

ہم نہ کہتے تھے کہ حالیؔ چپ رہو

راست گوئی میں ہے رسوائی بہت

Share this post


Link to post
Share on other sites

رنج اور رنج بھی تنہائی کا

 

رنج اور رنج بھی تنہائی کا

وقت پہنچا مری رسوائی کا

 

عمر شاید نہ کرے آج وفا

کاٹنا ہے شب تنہائی کا

 

تم نے کیوں وصل میں پہلو بدلا

کس کو دعویٰ ہے شکیبائی کا

 

ایک دن راہ پہ جا پہنچے ہم

شوق تھا بادیہ پیمائی کا

 

اس سے نادان ہی بن کر ملئے

کچھ اجارہ نہیں دانائی کا

 

سات پردوں میں نہیں ٹھہرتی آنکھ

حوصلہ کیا ہے تماشائی کا

 

درمیاں پائے نظر ہے جب تک

ہم کو دعویٰ نہیں بینائی کا

 

کچھ تو ہے قدر تماشائی کی

ہے جو یہ شوق خود آرائی کا

 

اس کو چھوڑا تو ہے لیکن اے دل

مجھ کو ڈر ہے تری خود رائی کا

 

بزم دشمن میں نہ جی سے اترا

پوچھنا کیا تری زیبائی کا

 

یہی انجام تھا اے فصل خزاں

گل و بلبل کی شناسائی کا

 

مدد اے جذبۂ توفیق کہ یاں

ہو چکا کام توانائی کا

 

محتسب عذر بہت ہیں لیکن

اذن ہم کو نہیں گویائی کا

 

ہوں گے حالیؔ سے بہت آوارہ

گھر ابھی دور ہے رسوائی کا

Share this post


Link to post
Share on other sites

Dhum Thi Apni Parsai Ki

 

Dhum Thi Apni Parsai Ki

Ki Bhi Aur Kis Se Ashnai Ki

 

Kyon Barhte Ho Ikhtilat Bahut

Ham Mein Taqat Nahin Judai Ki

 

Munh Kahan Tak Chupaoge Ham Se

Ham Ko Adat Hai Khudnumai Ki

 

Lag Mein Hai Lagw Ki Baten

Sulah Mein Cher Hai Larai Ki

 

Dil Bhi Pahlu Mein Ho To Yan

Kis Se Rakhiye Ummid Dil-Rubai Ki

 

Na Mila Koi Garat-E-Iman

Rah Gai Sharm Parsai Ki

 

Maut Ki Tarah Jis Se Darte The

Saat A Pahunchi Us Judai Ki

 

Zinda Phirne Ki Hai Hawas “Hali”

Intaha Hai Ye Behayai Ki

Share this post


Link to post
Share on other sites

دل سے خیال دوست بھلایا نہ جائے گا

 

دل سے خیال دوست بھلایا نہ جائے گا

سینے میں داغ ہے کہ مٹایا نہ جائے گا

 

تم کو ہزار شرم سہی مجھ کو لاکھ ضبط

الفت وہ راز ہے کہ چھپایا نہ جائے گا

 

اے دل رضائے غیر ہے شرط رضائے دوست

زنہار بار عشق اٹھایا نہ جائے گا

 

دیکھی ہیں ایسی ان کی بہت مہربانیاں

اب ہم سے منہ میں موت کے جایا نہ جائے گا

 

مے تند و ظرف حوصلۂ اہل بزم تنگ

ساقی سے جام بھر کے پلایا نہ جائے گا

 

راضی ہیں ہم کہ دوست سے ہو دشمنی مگر

دشمن کو ہم سے دوست بنایا نہ جائے گا

 

کیوں چھیڑتے ہو ذکر نہ ملنے کا رات کے

پوچھیں گے ہم سبب تو بتایا نہ جائے گا

 

بگڑیں نہ بات بات پہ کیوں جانتے ہیں وہ

ہم وہ نہیں کہ ہم کو منایا نہ جائے گا

 

ملنا ہے آپ سے تو نہیں حصر غیر پر

کس کس سے اختلاط بڑھایا نہ جائے گا

 

مقصود اپنا کچھ نہ کھلا لیکن اس قدر

یعنی وہ ڈھونڈتے ہیں جو پایا نہ جائے گا

 

جھگڑوں میں اہل دیں کے نہ حالیؔ پڑیں بس آپ

قصہ حضور سے یہ چکایا نہ جائے گا

Share this post


Link to post
Share on other sites

Haq Wafa Ka Jo Ham Jatane Lage

 

Haq Wafa Ka Jo Ham Jatane Lage

Ap Kuch Kah K Muskurane Lage

 

Ham Ko Jina Parega Furqat Mein

Wo Agar Himmat Azmane Lage

 

Dar Hai Meri Zuban Na Khul Jaye

Ab Wo Baten Bahut Banane Lage

 

Jan Bachti Nazar Nahin Ati

Gair Ulfat Bahut Jatane Lage

 

Tum Ko Karna Parega Uzr-E-Jafa

Ham Agar Dard-E-Dil Sunane Lage

 

Bahut Mushkil Hai Shewa-E-Taslim

Ham Bhi Akhir Ko Ji Churane Lage

 

Waqt-E-Rukhsat Tha Sakht "Hali" Par

Ham Bhi Baithe The Jab Wo Jane Lage

Share this post


Link to post
Share on other sites

بات کچھ ہم سے بن نہ آئی آج

 

بات کچھ ہم سے بن نہ آئی آج

بول کر ہم نے منہ کی کھائی آج

 

چپ پر اپنی بھرم تھے کیا کیا کچھ

بات بگڑی بنی بنائی آج

 

شکوہ کرنے کی خو نہ تھی اپنی

پر طبیعت ہی کچھ بھر آئی آج

 

بزم ساقی نے دی الٹ ساری

خوب بھر بھر کے خم لنڈھائی آج

 

معصیت پر ہے دیر سے یا رب

نفس اور شرع میں لڑائی آج

 

غالب آتا ہے نفس دوں یا شرع

دیکھنی ہے تری خدائی آج

 

چور ہے دل میں کچھ نہ کچھ یارو

نیند پھر رات بھر نہ آئی آج

 

زد سے الفت کی بچ کے چلنا تھا

مفت حالیؔ نے چوٹ کھائی آج

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.


×
×
  • Create New...