Jump to content
Sign in to follow this  
lady2000

Romantic Poetry -محبت شاعری

Recommended Posts

Posted (edited)

لطف وہ عشق میں پائے ہیں کہ جی جانتا ہے
رنج بھی ایسے اٹھائے ہیں کہ جی جانتا ہے

Edited by sana1

Share this post


Link to post
Share on other sites

ہم سے جنون عشق کا عالم نہ پوچھیئے
اپنا ہی انتظار کیا ہے کبھی کبھی

Share this post


Link to post
Share on other sites

موسمِ عشق جو آیا تو قیامت لایا
پھر وہ موسم تو گیا اور قیامت نہ گئی

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

وہ عشق جو ہم سے روٹھ گیا اب اس کا حال بتائیں کیا 

کوئی مہر نہیں کوئی قہر نہیں پھر سچا شعر سنائیں کیا

🔹

اک ہجر جو ہم کو لاحق ہے تا دیر اسے دہرائیں کیا 

وہ زہر جو دل میں اتار لیا پھر اس کے ناز اٹھائیں کیا

🔸

پھر آنکھیں لہو سے خالی ہیں یہ شمعیں بجھنے والی ہیں 

ہم خود بھی کسی کے سوالی ہیں اس بات پہ ہم شرمائیں کیا 

🔼

اک آگ غم تنہائی کی جو سارے بدن میں پھیل گئی 

جب جسم ہی سارا جلتا ہو پھر دامن دل کو بچائیں کیا

🔽

ہم نغمہ سرا کچھ غزلوں کی ہم صورت گر کچھ خوابوں کے 

بے جذبۂ شوق سنائیں کیا کوئی خواب نہ ہو تو بتائیں کیا

 

شاعر :اطہر نفیس

Share this post


Link to post
Share on other sites

کب ضیا بار ترا چہرۂ زیبا ہوگا
کیا جب آنکھیں نہ رہیں گی تو اجالا ہوگا

مشغلہ اس نے عجب سونپ دیا ہے یارو
عمر بھر سوچتے رہیے کہ وہ کیسا ہوگا

جانے کس رنگ سے روٹھے گی طبیعت اس کی
جانے کس ڈھنگ سے اب اس کو منانا ہوگا

اس طرف شہر ادھر ڈوب رہا تھا سورج
کون سیلاب کے منظر پہ نہ رویا ہوگا

یہی انداز تجارت ہے تو کل کا تاجر
برف کے باٹ لیے دھوپ میں بیٹھا ہوگا

دیکھنا حال ذرا ریت کی دیواروں کا
جب چلی تیز ہوا ایک تماشا ہوگا

آستینوں کی چمک نے ہمیں مارا انورؔ
ہم تو خنجر کو بھی سمجھے ید بیضا ہوگا

Share this post


Link to post
Share on other sites

دھیان میں آ کر بیٹھ گئے ہو ، تم بھی ناں
مجھے مسلسل دیکھ رہے ہو ، تم بھی ناں
دے جاتے ہو مجھ کو کتنے رنگ نئے
جیسے پہلی بار ملے ہو ، تم بھی ناں
ہر منظر میں اب ہم دونوں ہوتے ہیں
مجھ میں ایسے آن بسے ہو ، تم بھی ناں
عشق نے یوں دونوں کو آمیز کیا
اب تو تم بھی کہھ دیتے ہو ، تم بھی ناں
خود ہی کہو اب کیسے سنور سکتی ہوں میں
آئینہ میں تم ہوتے ہو ، تم بھی ناں
بن کے حسین ہونٹوں پر بھی رہتے ہو
اشکوں میں بھی تم بہتے ہو ، تم بھی ناں
میری بند آنکھیں تم پڑھ لیتے ہو
مجھ کو اتنا جان چکے ہو ، تم بھی ناں
مانگ رہے ہو رخصت اور خود ہی
ہاتھ میں ہاتھ لئے بیٹھے ہو ، تم بھی ناں

عنبرین حسیب عنبر

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...