Jump to content

Recommended Posts

اس کی آنکھوں میں محبت کا ستارہ ہوگا

ایک دن آئے گا وہ شخص ہمارا ہوگا

  

تم جہاں میرے لئے سیپیاں چنتی ہوگی

وہ کسی اور ہی دنیا کا کنارہ ہوگا

 

زندگی! اب کے مرا نام نہ شامل کرنا

گر یہ طے ہے کہ یہی کھیل دوبارہ ہوگا

 

جس کے ہونے سے میری سانس چلا کرتی تھی

کس طرح اس کے بغیر اپنا گزارا ہوگا

 

یہ اچانک جو اجالا سا ہوا جاتا ہے

دل نے چپکے سے ترا نام پکارا ہوگا

 

عشق کرنا ہے تو دن رات اسے سوچنا ہے

اور کچھ ذہن میں آیا تو خسارہ ہوگا

 

یہ جو پانی میں چلا آیا سنہری سا غرور

اس نے دریا میں کہیں پاؤں اُتارا ہوگا

 

کون روتا ہے یہاں رات کے سناتوں میں

میرے جیسا ہی کوئی ہجر کا مارا ہوگا

 

مجھ کو معلوم ہے جونہی میں قدم رکھوں گا

زندگی تیرا کوئی اور کنارہ ہوگا

 

جو میری روح میں بادل سے گرجتے ہیں وصی

اس نے سینے میں کوئی درد اتارا ہوگا

 

کام مشکل ہے مگر جیت ہی لوں گا اس کو

میرے مولا کا وصی جونہی اشارہ ہوگا

Edited by sana1
  • Thumbs Up 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Kisi Kee Aankh Sey Sapny Chura Ker Kuch Nahe Milta
Mundairon Sey Chiraghon Ko Bujha Ker Kuchh Nahe Milta

 

Hamari Soch Kee Perwaaz Ko Rokey Nahe Koi
Naey Aflaq Pey Pahrey Betha Ker Kuchh Nahe Milt

 

Koi aik Aadh Sapna Hu To Pher Acha Bhee Lagta Hey Hazaaro Khauwab Aankhon Main Saja Ker Kuchh Nahee Milta

 

Sukon Unko Nahee Milta Kabhee Perdais Ja Ker Bhee
Jinhain Apney Watan Sey Dil Laga Ker Kuchh Nahee Milta

 

Usey Kahna Key Pulkon Par Na Tanke Khauwbon Kee Jhaler
Samandar Key Kenary Ghar Bana Kar Kuchh Nahee Milta

  

Ye Achha He Key Aapus Key Bharam Na Tutane Paien
Kabhee Bhee Doston Ko Aazmaa Ker Kuchh Nahee Milta

  

Na Janey Koun Si Jazbey Ke Yun Taskin Kerta Hun
Bazahir To Tumharey Khat Jala Ker Kuchh Nahee Milta

 

Faqat Tumse Hee Kerta hun Men Saari Raaz Ki Baten
Her aik Ko Dastaan-e-Dil Suna Ker Kuchh Nahee Milta

  

Amul Kee Sukhti Raag Main Zara Sa Khoon Shamil Ker
Mere Hamdum Faqat Batain Bana Ker Kuchh Nahee Milta

  

Usey Men Peyar Kerta Hun To Mujh Ko Chain Aata Hey
Vo Kehta Hey Usey Mujh Ko Sata Ker Kuchh Nahee Milta

 

Mujhy Akser Sitaron Sey Yahi Avaz Aati Hey
Kisi Key Hijar Main Neendain Ganva Ker Kuchh Nahee Milta

 

Jigar Ho Jaye Ga Chhalni Ye Aankhain Khoon Roen Gee
 Bey-Faiz Logon Sey Nebha Ker Kuchh Nahee Milta

Edited by sana1

Share this post


Link to post
Share on other sites

کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

 

کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

تُو بڑے پیار سے بڑے چاوْ سے بڑے مان کے ساتھ

 

اپنی نازک سی کلائی میں چڑھاتی مجھ کو

اور بےتابی سے فرقت کے خزاں لمحوں میں

 

تو کسی سوچ میں ڈوبی جو گھماتی مجھ کو

میں تیرے ہاتھ کی خوشبو سے مہک سا جاتا

 

جب کبھی موڈ میں آ کر مجھے چوما کرتی

تیرے ہونٹوں کی حدت سے دہک سا جاتا

 

رات کو جب بھی تُو نیندوں کے سفر پر جاتی

مَرمَریں ہاتھ کا اک تکیہ بنایا کرتی

 

میں ترے کان سے لگ کر کئی باتیں کرتا

تیری زلفوں کو تیرے گال کو چوما کرتا

 

جب بھی تو بند قبا کھولنے لگتی جاناں

کاپنی آنکھوں کو ترے حُسن سے خیرہ کرتا

 

مجھ کو بےتاب سا رکھتا تیری چاہت کا نشہ

میں تری روح کے گلشن میں مہکتا رہتا

 

میں ترے جسم کے آنگن میں کھنکتا رہتا

کچھ نہیں تو یہی بے نام سا بندھن ہوتا

 

کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

 

وصی شاہ

Edited by sunrise
  • Red Heart 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے

کوئی بھی لفظ لکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

تری یادوں کی خوشبو کھڑکیوں میں رقص کرتی ہے

ترے غم میں سلگتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

نہ جانے ہو گیا ہوں اس قدر حساس میں کب سے

کسی سے بات کرتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

میں سارا دن بہت مصروف رہتا ہوں مگر جونہی

قدم چوکھٹ پہ رکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

ہر اک مفلس کے ماتھے پر الم کی داستانیں ہیں

کوئی چہرہ بھی پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

بڑے لوگوں کے اونچے بدنما اور سرد محلوں کو

غریب آنکھوں سے تکتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

ترے کوچے سے اب میرا تعلق واجبی سا ہے

مگر جب بھی گزرتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

 

ہزاروں موسموں کی حکمرانی ہے مرے دل پر

وصیؔ میں جب بھی ہنستا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Edited by Mehak
  • Red Heart 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

آج یوں موسم نے دی جشن محبت کی خبر

 

آج یوں موسم نے دی جشن محبت کی خبر

پھوٹ کر رونے لگے ہیں ، میں محبت اور تم

 

ہم نے جونہی کر لیا محسوس منزل ہے قریب

راستے کھونے لگے ہیں میں ، محبت اور تم

 

چاند کی کرنوں نے ہم کو اس طرح بوسہ دیا

دیوتا ہونے لگے ہیں میں ، محبت اور تم

 

آج پھر محرومیوں کی داستانیں اوڑھ کر

خاک میں سونے لگے ہیں میں ،محبت اور تم

 

کھو گئے انداز بھی ، آواز بھی، الفاظ بھی

خامشی ڈھونے لگے ہیں میں ، محبت اور تم

Edited by Mehak
  • Neutral 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

خاموشی رات کی دیکتھا ہوں اور تجھے سوچتا ہوں

 

خاموشی رات کی دیکتھا ہوں اور تجھے سوچتا ہوں

مد ہوش اکثر ہوجاتا ہوں اور تجھے سوچتا ہوں

 

ہوش والوں میں جاتا ہوں تو الجھتی ہے طبعیت

سو با ہوش پڑا رہتا ہوں اور تجھے سوچتا ہوں

 

تو من میں میرے آ جا میں تجھ میں سما جاؤں

ادھورے خواب سمجھتا ہوں اورتجھے سوچتا ہوں

 

جمانے لگتی ہیں جب لہو میرا فر خت کی ہوائیں

تو شال قر بت کی اوڑھتا اور تجھے سوچتا ہوں

Edited by Mehak
  • Thumbs Up 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

دکھ درد میں ہمیشہ نکالے تمہارے خط

 

دکھ درد میں ہمیشہ نکالے تمہارے خط

اور مل گئی خوشی تو اچھالے تمہارے خط

 

سب چوڑیاں تمہاری سمندر کو سونپ دیں

اور کر دیے ہوا کے حوالے تمہارے خط

 

میرے لہو میں گونج رہا ہے ہر ایک لفظ

میں نے رگوں کے دشت میں پالے تمہارے خط

 

یوں تو ہیں بے شمار وفا کی نشانیاں

لیکن ہر ایک شے سے نرالے تمہارے خط

 

جیسے ہو عمر بھر کا اثاثہ غریب کا

کچھ اس طرح سے میں نے سنبھالے تمہارے خط

 

اہل ہنر کو مجھ پہ وصیؔ اعتراض ہے

میں نے جو اپنے شعر میں ڈھالے تمہارے خط

 

پروا مجھے نہیں ہے کسی چاند کی وصیؔ

ظلمت کے دشت میں ہیں اجالے تمہارے خط

 

 

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

جمع تم ہو نہیں سکتے

جمع تم ہو نہیں سکتے

ہمیں منفی سے نفرت ہے

 

تمہیں تقسیم کرتے ہیں

تو حاصل کچھ نہیں آتا

 

کوئی قائدہ کوئی کُلیہ

نہ لاگُو تجھ پے ہو پائے

 

ضرب تجھ کو اگر دوِ تو

حسابوں میں خلل آئے

 

اکائی کو دھائی پر

میں نسبت دوں تو کیسے دوں

 

نہ الجبرا سے لگتے ہو

نہ ہو ڈگری نکل آئے

 

عُمر یہ کٹ گئی میری

تجھے ہمدم سمجھنے میں

 

جو حل تیرا اگر نکلے

تو سب کچھ ہی اُلجھ جائے

 

صفر تھی ابتداء میری صفر ہی اب تلک تم ہو

صفر ضربِ صفر ہو تم نہ جس سے کچھ فرق آئے

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں

 

اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں

وہ کچھ زیادہ ہی یاد آتا ہے سردیوں میں

 

مجھے اجازت نہیں ہے اس کو پکارنے کی

جو گونجتا ہے لہو میں سینے کی دھڑکنوں میں

 

وہ بچپنا جو اداس راہوں میں کھو گیا تھا

میں ڈھونڈتا ہوں اسے تمہاری شرارتوں میں

 

اسے دلاسے تو دے رہا ہوں مگر یہ سچ ہے

کہیں کوئی خوف بڑھ رہا ہے تسلیوں میں

 

تم اپنی پوروں سے جانے کیا لکھ گئے تھے جاناں

چراغ روشن ہیں اب بھی میری ہتھیلیوں میں

 

جو تو نہیں ہے تو یہ مکمل نہ ہو سکیں گی

تری یہی اہمیت ہے میری کہانیوں میں

 

مجھے یقیں ہے وہ تھام لے گا بھرم رکھے گا

یہ مان ہے تو دیے جلائے ہیں آندھیوں میں

 

ہر ایک موسم میں روشنی سی بکھیرتے ہیں

تمہارے غم کے چراغ میری اداسیوں میں

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

تم مری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤگے

ان کہی بات کو سمجھوگے تو یاد آؤں گا

 

ہم نے خوشیوں کی طرح دکھ بھی اکٹھے دیکھے

صفحۂ زیست کو پلٹو گے تو یاد آؤں گا

 

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤگے

کسی معذور کو دیکھوگے تو یاد آؤں گا

 

اسی انداز میں ہوتے تھے مخاطب مجھ سے

خط کسی اور کو لکھو گے تو یاد آؤں گا

 

میری خوشبو تمہیں کھولے گی گلابوں کی طرح

تم اگر خود سے نہ بولو گے تو یاد آؤں گا

 

آج تو محفل یاراں پہ ہو مغرور بہت

جب کبھی ٹوٹ کے بکھرو گے تو یاد آؤں گا

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

Hazaron Dukh Paren Sehnaa

 

Hazaron Dukh Paren Sehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Hai Tum Se Bus Yahe Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Tera Har Bar Mere Khat Ko Parhna Aur Ro Dena

Mera Har Bar Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Kiya Tha Hum Ne Campus Ki Nadi Par Ek Haseen Wada

Bhaly Hum Ko Parhy Marna Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Jahan Mein Jab Talak Panchi Chahaktey Urhtey Phirty Hain

Hai Jab Tak Phool Ka Khilna Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Purane Ah-Had Ko Jab Zinda Karne Ka Khayal Aey

Mujhe Bus Itna Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Wo Tera Hijar Ki Shab Main Fone Rakhany Se Zara Pehley

Bahat Rotey Huwe Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Agar Hum Has-Raton Ki Qabar Mein He Dafan Ho Jaen

To Yeh Qatbon Pe Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Purane Rabton Ko Phir Nae Waade Ki Khawahish Hai

Zara Aik Baar To Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

 

Gae Lamhat Fursat Ke Kahan Se Dhoond Kar Laon

Wo Pehron Hath Par Likhna Mohabbat Mar Nahi Saktia

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

Kisi Ki Aankh Se Sapne Chura Kar Kuch Nahi

 

Kisi Ki Aankh Se Sapne Chura Kar Kuch Nahi Milta
Munderon Se Chiraghon Ko Bojha Kar Kuch Nahi Milta

 

Hamari Soch Ki Parwaz Ko Roke Nahi Koi
Nae Aflaq Pe Pehrey Bitha Kar Kuch Nahi Milata

 

Koi Ek Aadh Sapna Ho To Phir Acha Bhi Lagta Hai
Hazaro Khawab Aankhon Mein Saja Kar Kuch Nahi Milta

 

Sakon Un Ko Nahi Milta Kabhi Pardes Ja Kar Bhi
Jinhen Apne Watan Se Dil Laga Kar Kuch Nahi Milta

 

Use Kehna Ke Palkon Per Na Tanke Khawbon Ki Jhalar
Samandar Ke Kinare Ghar Bana Ker Kuch Nahi Milta

 

Ye Acha Hai Ke Aapas Ke Bharam Na Tootane Paien
Kabhi Bhi Doston Ko Azamaa Kar Kuch Nahi Milta

 

Na Jane Koun Se Jazabe Ki Yon Taskeen Karta Hon Bazahir To Tumhare Khat Jala Kar Kuch Nahi Milta

 

Faqat Tum Se Hi Karta Hon Main Sari Raaz Ki Batain
Har Ek Ko Dastan-E-Dil Suna Kar Kuch Nahi Milta

 

Amal Ki Sokhti Rag Mein Zara Sa Khoon Shamil Kar
Mare Hamdam Faqat Baten Bana Kar Kuch Nahi Milta

 

Use Main Pyar Karta Hon To Mujh Ko Chain Ata Hai
Wo Kehata Hai Use Mujh Ko Sata Kar Kuch Nahi Milta

 

Mujhe Aksar Sitaron Se Yahi Awaaz Aati Hai
Kisi Ke Hijr Mein Nendein Ganwaa Kar Kuch Nahi Milta

 

Jigar Ho Jaye Ga Chalni Ye Ankhein Khoon Roen Gi
Wasi Be-Faiz Logon Se Nibha Kar Kuch Nahi Milta

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

 اپنے احساس سے چھو کر مجھے صندل کر دو
میں کہ صدیوں سے ادھورا  ہوں مکمل کردو

نہ تمہیں ہوش رہے اور نہ مجھے ہوش رہے
اس قدر ٹوٹ کے چاہو، مجھے پاگل کردو

تم ہتھیلی کو مرے پیار کی مہندی سے رنگو
اپنی آنکھوں میں مرے نام کا کاجل کردو

اس کے سائے میں مرے خواب دہک اُٹھیں گے
میرے چہرے پہ چمکتا ہوا آنچل کر دو

دھوپ ہی دھوپ ہوں میں ٹوٹ کے برسو مجھ پر
اس قدر برسو میری روح میں جل تھل کر دو

جیسے صحراؤں میں ہر شام ہوا چلتی ہے
اس طرح مجھ میں چلو اور مجھے تھل کر دو

تم چھپا لو مرا دل اوٹ میں اپنے دل کی
اور مجھے میری نگاہوں سے بھی اوجھل کردو

مسئلہ ہوں تو نگاہیں نہ چراؤ مجھ سے
اپنی چاہت سے توجہ سے مجھے حل کردو

اپنے غم سے کہو ہر وقت مرے ساتھ رہے
ایک احسان کرو اس کو مسلسل کردو

مجھ پہ چھا جاؤ کسی آگ کی صورت جاناں
اور مری ذات کو سوکھا ہوا جنگل کردو

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.


×
×
  • Create New...