Jump to content
sunrise

Sad Poetry - اداس شاعری

Recommended Posts

وہ ہمسفر تھا مگر اس سے ہمنوائی نہ تھی
کہ دھوپ چھاؤں کا عالم رہا جدائی نہ تھی

نہ اپنا رنج نہ اپنا دکھ نہ اوروں کا ملال
شبِ فراق کبھی ہم نے یوں گنوائی نہ تھی

محبتوں کا سفر کچھ اس طرح بھی گزرا تھا
شکستہ دل تھے مسافر شکستہ پائی نہ تھی

عداوتیں تھیں ، تغافل تھا، رنجشیں تھیں بہت
بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا ، بے وفائی نہ تھی

بچھڑتے وقت ان آنکھوں میں تھی ہماری غزل
غزل بھی وہ جو کسی کو ابھی سنائی نہ تھی

کبھی یہ حال کہ دونوں میں یک دلی تھی بہت
کبھی یہ مرحلہ جیسے کہ آشنائی نہ تھی

عجیب ہوتی ہے راہِ سخن بھی دیکھ نصیر
وہاں بھی آ گئے آخر جہاں رسائی نہ تھی

(نصیر ترابی)
Edited by sunrise
  • Like 1
  • Thanks 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

اب تو یہ بھی نہیں رہا احساس

 

اب تو یہ بھی نہیں رہا احساس

درد ہوتا ہے یا نہیں ہوتا

 

عشق جب تک نہ کر چکے رسوا

آدمی کام کا نہیں ہوتا

 

ٹوٹ پڑتا ہے دفعتاً جو عشق

بیشتر دیر پا نہیں ہوتا

 

وہ بھی ہوتا ہے ایک وقت کہ جب

ماسوا ماسوا نہیں ہوتا

 

ہائے کیا ہو گیا طبیعت کو

غم بھی راحت فزا نہیں ہوتا

 

دل ہمارا ہے یا تمہارا ہے

ہم سے یہ فیصلہ نہیں ہوتا

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

وابسطہ جن کی یادوں سے میری شام و صبح ہیں

ان پھول جیسے لوگوں کو یارب کبھی اداس نہ کرنا

Share this post


Link to post
Share on other sites

آخری خدا حافظ

 

بہت مشکل تھا وہ آخری خدا حافظ کہنا

چلتے چلتے رکنا، پلٹنا اور مجھ سے یہ کہنا۔

کچھ لمحے ہی تو تھے جو گزر گئے اک پل میں

تھےجو کچھ ھنسی میں تو کچھ تھے غمی میں

مسکراتے لبوں پر آنسوؤں کا کچھ اس طرح بہنا

بہت مشکل تھا وہ آخری خدا حافظ کہنا

کہ پھر سے دوریاں اور فاصلے یہ کیسے سہوں گی

میں پھرسے ٹوٹ کے چاہوں گی پر کیسے ملوں گی

مجھے ان سب سوالوں کے جواب دیتے رہنا

بہت مشکل تھاوہ آخری خدا حافظ کہنا

تمہاری خشبو سے میں اتنی متعارف سی ہو گئی

میں اپنے پیار سے کچھ ایسی آشنا سی ہو گئی

کٹھن سا لگے گا ہر اک پل اب یہ رہنا

بہت مشکل تھا وہ آخری خداحافظ کہنا۔

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم

 

خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم

بچھڑ گیا تری صورت بہار کا موسم

 

کئی رتوں سے مرے نیم وا دریچوں میں

ٹھہر گیا ہے ترے انتظار کا موسم

 

وہ نرم لہجے میں کچھ تو کہے کہ لوٹ آئے

سماعتوں کی زمیں پر پھوار کا موسم

 

پیام آیا ہے پھر ایک سرو قامت کا

مرے وجود کو کھینچے ہے دار کا موسم

 

وہ آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے

مرے بدن کو ملا ہے چنار کا موسم

 

رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر

گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

 

ہوا چلی تو نئی بارشیں بھی ساتھ آئیں

زمیں کے چہرے پہ آیا نکھار کا موسم

 

وہ میرا نام لیے جائے اور میں اس کا نام

لہو میں گونج رہا ہے پکار کا موسم

 

قدم رکھے مری خوشبو کہ گھر کو لوٹ آئے

کوئی بتائے مجھے کوئے یار کا موسم

 

وہ روز آ کے مجھے اپنا پیار پہنائے

مرا غرور ہے بیلے کے ہار کا موسم

 

ترے طریق محبت پہ بارہا سوچا

یہ جبر تھا کہ ترے اختیار کا موسم

Share this post


Link to post
Share on other sites

ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا

 

ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا

مگر جو تو نہ ملا زیست کا مزا نہ ملا

 

حیات شوق کی یہ گرمیاں کہاں ہوتیں

خدا کا شکر ہمیں نالۂ رسا نہ ملا

 

ازل سے فطرت آزاد ہی تھی آوارہ

یہ کیوں کہیں کہ ہمیں کوئی رہنما نہ ملا

 

یہ کائنات کسی کا غبار راہ سہی

دلیل راہ جو بنتا وہ نقش پا نہ ملا

 

یہ دل شہید فریب نگاہ ہو نہ سکا

وہ لاکھ ہم سے بہ انداز محرمانہ ملا

 

کنار موج میں مرنا تو ہم کو آتا ہے

نشان ساحل الفت ملا ملا نہ ملا

 

تری تلاش ہی تھی مایۂ بقائے وجود

بلا سے ہم کو سر منزل بقا نہ ملا

Share this post


Link to post
Share on other sites

سنو __ تمہیں ایک راز کی بات بتائوں

جہاں تم نہیں ہوتے وہاں لمحے اداس ہوتے ہیں

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

کوئی''امید'' نہیں تھی تم سے ''محبت'' کی

صرف اتنا شوق تھا کہ، دل ٹوٹے تو تمہارے ہاتھ سے

Share this post


Link to post
Share on other sites

برباد کرنا تھا تو کسی اور طریقے سے کرتے

زندگی میں ,زندگی بن کر ,زندگی سے ,زندگی ہی چھین لی

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

کیا حسین و دلکش انداز ہے۔۔۔۔۔۔۔

کتناحسیں ودلکش منظر ہےجاناں

تیری آنکھیں ہیں یا سمندرہےجاناں

 

ہر انسان کو نیت کا پھل ملتا ہے

کہتےہیں اسی کانام مقدر ہےجاناں

 

شیشے کی طرح نازک دل ہےاپنا

ہرکوئی یہاں پھینکتا پتھرہےجاناں

 

خوشیاں مجھ سےدور بھاگتی ہیں

ًمیرےساتھ غموں کالشکرہےجاناں

Share this post


Link to post
Share on other sites

تمہاری کہانی تمہاری زبانی

 

تمہاری کہانی تمہاری زُبانی

ہمارے افسانے کوئی نہ جانے

 

گلے کیے شکوں کی باتیں

کیسے سنے سہے کوئی نہ جانے

 

بے آبرو کیا جو ضامن تھے آبرو کے

دل کے ان گنت زخم کوئی نہ جانے

 

مسکراہٹ نہ اب آئے بھول سے بھی

ہونٹ سیے کیوں بیٹھے ہیں کوئی نہ جانے

 

بے خبر دنیا تماشائی تو ہے

کسی کی ضرورت ہے کہ نہیں کوئی نہ جانے

 

دیوانہ وار بھٹکا پھر پلٹا وہیں

منزل ہوئی ارمان سی کوئی نہ جانے

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

سمیٹ کیوں نہیں لیتے مجھے اپنی بانہوں میں
بھلا پنچھی بھی رکتے ہیں اڑنے سے ہواؤں میں

کھڑا جو کر گئے ایسے دہ راہے پر مجھے ظالم
نہیں معلوم ملے گا کیا جزاؤں میں سزاؤں میں

ہاتھوں کی لکیروں میں جو لکھا وہ ہو گا بھی
مگر دکھنا یہ باقی ہے اثر کتنا دعاؤں میں

دکھاوا بھی نہیں ھوتا ملامت بھی نہیں کرتے
جسے دکھتا ہو بس ہمدم وہ کیا رکھے نگاہوں میں

 

 

Edited by Mehak

Share this post


Link to post
Share on other sites

کُجھ شوق سِی یار فقیری دا
کُجھ عشق نے دَر دَر رول دِتا


کُجھ سجنا کَسر نہ چُھوڑی سِی
کُجھ زہر رَقیباں گھول دِتا


کُجھ ہجر فِراق داَ رنگ چٹرہیا

کُجھ دردِ ماہی انمول دِتا

کُجھ سڑ گئی قسمت میری
کُجھ پیار وِچ یاراں رُول دِتا

کُجھ اونج وِی رہواں اوکھیاں سَن
کُجھ گل وِچ غم داَ طوق وِی سِی

کُجھ شہر دے لوگ وِی ظالم سنَ
کُجھ سانوں مَرن دا شوق وِی سی

Edited by sunrise

Share this post


Link to post
Share on other sites

تیری یاد میں ہی __گُزر گئ

وہ جو زندگی تھی , بڑے کام کی

Share this post


Link to post
Share on other sites

*وفاداری* کو پرکھا جا رہا ھے
 ھمارا جسم *داغا* جا رہا ھے

کسی بوڑھے کی *لاٹھی* چِھن گئی
 ھے وہ دیکھو! اک *جنازہ* جا رہا ھے

میری تہزیب *ننگی* ھو رہی ھے 
یہ اُڑ کر ایک *دوپٹہ* جا رہا ھے

نہ جانے *جرم* کیا ھم سے ھوا ھے
ھمیں قسطوں میں *لُوٹا* جا رہا  ھے

*قلم* کچھ اور لکھنا چاہتا تھا

مگر کاغذ ھی *بھیگا* جا رہا ھے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarq e taaluq pe
Roya na tu, na main
Lekin yeh kya ke chain se
Soya na tu, na main

Wo humsafar tha
Wo humsafar tha
Woh humsafar tha  
Magar us se hum-nawa'i na thi.
Wo hamsafar tha
Magar us se hum-nawa'i na thi.

Ke dhoop chhaon ka...
Ke dhoop chhaon ka alam raha, judaai na thi
Wo humsafar tha...
Magar us sey hum-nawa'i na thi...
Ke dhoop chhaon.
Ke dhoop chhaon ka alam raha, judaai na thi
Woh humsafar tha...
Woh humsafar tha...

Adaavatein thi...
Taghaaful thaa...
Ranjishein thhi magar

Adaavatein thi.
Taghaaful thaa...
Ranjishein theen Magar

Bicharne wale main sab kuch tha bewafai na thi...
Bicharne wale main sab kuch tha bewafai na thi...

Ke dhoop chhaon ka...
Ke dhoop chhaon ka alam raha, judaai na thi.

Wo humsafar tha...
Wo humsafar tha...

Kajal daaron, kurkura surma saha na jaaye
Jin nain mein ye pi basay, dooja kon samaaye
Beecharte waqt un ankhon mein,
Thee hamari ghazal
Beecharte waqt un ankhon mein,
Thee hamari ghazal

Ghazal bhi wo jo,
Kisi ko kabhi sunayi na thi
Ghazal bhi wo jo,
Kisi ko kabhi sunayi na thi

Ke dhoop chhaon ka...
Ke dhoop chhaon ka alam raha, judaai na thi.

Wo humsafar thaa...
Wo humsafar thaa...

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Suna Hai Log Usay Aankh Bhar Ke Dekhte Hain
So Us Ke Shahar Mein Kuch Din Thehar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Rabt Hai Usko Kharaab Halon Se
So Apne Aap Ko Barbaad Karke Dekhte Hain

Suna Hai Dard Ki Ga-Hak Hai Chashm-E-Naaz Uski
So Ham Bhi Uski Gali Se Guzar Kar Dekhte Hain

Suna Hai Usko Bhi Hai Sheir-O-Shaeri Se Shaghaf
So Ham Bhi Moajze Apne Hunar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Bole To Baton Se Phol Jharte Hain
Yeh Baat Hai To Chalo Baat Kar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Raat Use Chaand Taktaa Rehta Hai
Sitare Baam-E-Falak Se Utar Kar Dekhte Hain

Suna Hai Din Ko Use Titliyaan Satati Hain
Suna Hai Raat Ko Jugnu Thehr Ke Dekhte Hain

Suna Hai Hashr Hain Uski Ghazal Si Aankhein
Suna Hai Usko Hiran Dasht Bhar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Uski Siyah Chashmagi Qayamat Hai
So Usko Surma Farosh Aankh Bhar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Uske Labon Se Gulab Jalte Hain
So Ham Bahaarh Pe Ilzaam Dhar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Aaeinaa Tamasil Hai Jabin Uski
Jo Saadaa Dil Hai Use Ban-Sanwar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Uske Badan Ke Taraash Aise Hain
Ke Phol Apni Qabaaein Katar Ke Dekhte Hain

Suna Hai Uski Shabistaan Se Mut-Tasil Hai Bahisht
Makeen Udhar Ke Bhi Jalve Idhar Ke Dekhte Hain

Ruke Toh Gardishein Uska Tawaaf Karti Hain
Chale To Usko Zamaane Thehr Ke Dekhte Hain

Kahaniyan He Sahi Sab Mubalghe He Sahi
Agar Woh Khawab Hai Tou Taabir Kar Ke Dekhte Hain

Ab Usake Shehar Mein Thehrein Ke Koch Kar Jaein
"Faraz" Aao Sitare Safar Ke Dekhte Hain

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.


×
×
  • Create New...